آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گرے |شکیب جلالی|

آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گرے |شکیب جلالی|
آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گرے |شکیب جلالی|

  

آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گرے 

جتنے اس پیڑ کے پھل تھے پسِ دیوار گرے 

ایسی دہشت تھی فضاؤں میں کھلے پانی کی 

آنکھ جھپکی بھی نہیں ہاتھ سے پتوار گرے 

مجھے گرنا ہے تو میں اپنے ہی قدموں میں گروں 

جس طرح سایۂ دیوار پہ دیوار گرے 

تیرگی چھوڑ گئے دل میں اجالے کے خطوط 

یہ ستارے مرے گھر ٹوٹ کے بے کار گرے 

کیا ہوا ہاتھ میں تلوار لیے پھرتی تھی 

کیوں مجھے ڈھال بنانے کو یہ چھتنار گرے 

دیکھ کر اپنے در و بام لرز جاتا ہوں 

مرے ہم سایے میں جب بھی کوئی دیوار گرے 

وقت کی ڈور خدا جانے کہاں سے ٹوٹے 

کس گھڑی سر پہ یہ لٹکی ہوئی تلوار گرے 

ہم سے ٹکرا گئی خود بڑھ کے اندھیرے کی چٹان 

ہم سنبھل کر جو بہت چلتے تھے ناچار گرے 

کیا کہوں دیدۂ تر یہ تو مرا چہرہ ہے 

سنگ کٹ جاتے ہیں بارش کی جہاں دھار گرے 

ہاتھ آیا نہیں کچھ رات کی دلدل کے سوا 

ہائے کس موڑ پہ خوابوں کے پرستار گرے 

وہ تجلی کی شعاعیں تھیں کہ جلتے ہوئے پر 

آئنے ٹوٹ گئے آئنہ بردار گرے 

دیکھتے کیوں ہو شکیبؔ اتنی بلندی کی طرف 

نہ اٹھایا کرو سر کو کہ یہ دستار گرے 

شاعر:شکیب جلالی

(مجموعۂ کلام: روشنی اے روشنی )

Aa    K   Pathar   To   Miray   Sehn   Men    Do    Chaar    Giray

Jitnay    Iss    Pairr   K    Phall    Thay    Pas-e-Dewaar    Giray

Aisi   Dehshat   Thi   Fazaaon    Men    Khulay    Paani   Ki

Annkh    Jhapki   Bhi    Nahen   Haath   Say   Patwaar    Giray

Mujhay   Gira   Hay   To   Main    Apnay   Hi   Qadmon   Men   Girun

Jiss   Tarah   Saaya-e-Dewaar    Pe    Dewaar    Giray

Teergi   Chorr    Gaey   Dil   Men    Ujaalaon   K   Khatoot

Yeh   Sitaaray    Miray   Ghar    Toot   K   Bekaar    Giray

Kaya   Hua    Haath    Men   Talawaar   Liay    Phirti   Hay

Kiun   Mujhay   Dhaal    Banaay   Ko   Yeh    Chhatnaar    Giray

Dekh   Kar    Apnay    Dar-o-Baam    Laraz    Jaata   Hun

Meray    Hamsaaey   Men    Jab   Bhi    Koi   Dewaar    Giray

Waqt    Ki    Dor    KHUDA    Jaanay   Kahan   Say  Tootay

Kiss   Gharri   Sar   Pe   Yeh    Lattakti   Hui   Talwaar    Giray

Ham   Sa y Takra   K Khud    Barrh     K    Andhairay   Ki   Chattaan

Ham   Sanbhall   Kar   Jo   Bahut   Chaltay   Thay   Naachaar    Giray

Kaya    Kahun    Deeda-e-Tar   Yeh   To   Mira    Chehra   Hay

Sang   Katt   Jaatay   Hen    Baarish   Ki   Jahan   Dhaar   Giray

Haath   Aaya   Nahen   Kuchh   Raat   Ki   Daldal   K  Siwa

Haaey   Kiss   Morr    Pe   Khaabon   K   Parastaar    Giray

Wo   Tajalli   Ki   Shuaaen   Then   Keh   Chaltay   Huay   Teer

Aainay   Toot    Gaey   Aaina   Bardaar    Giray

Dekhtay   Kiun   Ho   SHAKEB   Itni   Bulandi   Ki   Taraff

Na   Uthaaya   Karo   Sar   Ko   Keh    Yeh   Dastaar    Giray

Poet: Shakeb   Jalali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -