گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا |شکیب جلالی|

گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا |شکیب جلالی|
گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا |شکیب جلالی|

  

گلے ملا نہ کبھی چاند بخت ایسا تھا 

ہرا بھرا بدن اپنا درخت ایسا تھا 

ستارے سسکیاں بھرتے تھے اوس روتی تھی 

فسانۂ جگر لخت لخت ایسا تھا 

ذرا نہ موم ہوا پیار کی حرارت سے 

چٹخ کے ٹوٹ گیا دل کا سخت ایسا تھا 

یہ اور بات کہ وہ لب تھے پھول سے نازک 

کوئی نہ سہہ سکے لہجہ کرخت ایسا تھا 

کہاں کی سیر نہ کی توسن تخیل پر 

ہمیں تو یہ بھی سلیماں کے تخت ایسا تھا 

ادھر سے گزرا تھا ملک سخن کا شہزادہ 

کوئی نہ جان سکا ساز و رخت ایسا تھا 

شاعر: شکیب جلالی

(مجموعۂ کلام: روشنی اے روشنی )

Galay   Mila   Na   Kabhi   Chaand   ,   Bakht   Aisa    Tha

Hara   Bhara    Badan   Apna   Darakht   Aisa    Tha

Sitaray   Siskiyaan   Bhartay   Thay   Aos   Roti   Thi

Fasaana-e-Jigar    Lakht   Lakht   Aisa    Tha

Zara   Na   Moom   Hua   Piyaar   Ki    Haraarat   Say

Chatakh   K Toot   Gaya   Dil   Ka   Sakht   Aisa    Tha

Yeh   Aor   Baat    Keh    Wo   Lab   Thay   Phool    Say   Naazuk

Koi   Na    Seh    Sakay   Lehja    Karakht   Aisa    Tha

Kahan    Ki    Sair   Na    Ki   Taosan-e-Takhayyal   Par

Hamen   To   Yeh    Bhi   Sulemaan   K   Takht   Aisa    Tha

Idhar   Say   Guzra   Tha   Mulk-e-Sukhan   Ka   Shehzaada

Koi   Na    Jaan   Saka   Saaz    Darakht   Aisa    Tha

Poet: Shakeb   Jalali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -