دلِ غمزدہ کو خوشی کب ملے گی|شکیل بدایونی|

دلِ غمزدہ کو خوشی کب ملے گی|شکیل بدایونی|
دلِ غمزدہ کو خوشی کب ملے گی|شکیل بدایونی|

  

دلِ غمزدہ کو خوشی کب ملے گی

نہ جانے نئی زندگی کب ملے گی

یہ پژمدہ کلیاں یہ افسردہ غنچے

نہ جانے انہیں تازگی کب ملے گی

ترانہ بہ لب ہیں ہزاروں کنھیا

نہ جانے انہیں بانسری کب ملے گی

تصور میں کب ہوگی پیدا نفاست

تخیل کو پاکیزگی کب ملے گی

خرد کو تو دیوانہ پن مل گیا ہے

جنوں کو مگر آگہی کب ملے گی

شکیل اپنے دل کی حکایت ہو جس میں

ترنم کو وہ شاعری کب ملے گی

شاعر: شکیل بدایونی

(مجموعۂ کلام: دور کو ئی گائے)

Dil-e-Ghamzadaa   Ko   Khushi   Kab    Milay   Gi

Na   Jaany   Nai   Zindagi   Kab    Milay   Gi

Yeh   Pazzmurda   Kaliyaan   Yeh   Afsurda   Ghunchay

Na    Jaany    Inhen    Taazgi   Kab    Milay   Gi

Taraana   Ba   Lab   Hen    Hazaaron   Kanahiyya

N a   Jaanay    Unhen   Baasari   Kab    Milay   Gi

Tasawwaar   Men   Kab   Ho   Gi   Paida   Nafaasat

Takhayyal   Ko   Pakeezgi   Kab    Milay   Gi

Khirad   Ko   Dewaana   Pan   Mill   Gaya   Hay

Junoon   Ko   Magar   Aagahi   Kab    Milay   Gi

SHAKEEL   Apnay   Dil   Ki    Haqaayat   Ho   Jiss   Men

Tarannum   Ko   Wo   Shaayari   Kab    Milay   Gi

Poet: Shakeel     Badayuni

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -