غم سے کہاں اے عشق مفر ہے |شکیل بدایونی|

غم سے کہاں اے عشق مفر ہے |شکیل بدایونی|
غم سے کہاں اے عشق مفر ہے |شکیل بدایونی|

  

غم سے کہاں اے عشق مفر ہے 

رات کٹی تو صبح کا ڈر ہے 

آئنے میں جو دیکھ رہےہو 

یہ بھی ہمارا حسن نظر ہے 

غم کو خوشی کی صورت بخشی 

اس کا بھی سہرا آپ کے سر ہے 

لاکھ ہیں ان کے جلوے جلوے 

میری نظر پھر میری نظر ہے 

تم ہی سمجھ لو تم ہو مسیحا 

میں کیا جانوں درد کدھر ہے 

پھر بھی شکیلؔ اس دور میں پیارے 

صاحب فن ہے اہل ہنر ہے 

شاعر: شکیل بدایونی

(مجموعۂ کلام: دور کو ئی گائے)

Gham   Say   Kahan   Ay   Eshq   Mafar   Hay

Raat   Kati   To   Subh   Ka   Dar   Hay

Aainay   Men   Jo   Dekh    Rahay   Ho 

Yeh   Bhi    Hamaara    Husn-e-Nazar   Hay

Gham   Ko   Khushi    Ki    Soorat   Bakhshi

Iss   Ka   Bhi   Sehra   Aap   K   Sar   Hay

Laakh   Hen   Un   K    Jalaway   Jalway

Meri   Mazar    Phir    Meri   Nazar   Hay

Tum   Hi    Samajh   Lo    Tum    Ho   Maseeha

Main    Kaya    Jaanun   Dard    Kidhar   Hay

Phir    Bhi   SHAKEEL   Iss    Daor    Men   Payaaray

Saahib-e-Fan   Hay , Ehl-e-Hunar   Hay

Poet: Shakeel   Badayuni

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -