پروگرام ریڈیو کلینک میں پروفیسر ڈاکٹر افضل میاں شریک

پروگرام ریڈیو کلینک میں پروفیسر ڈاکٹر افضل میاں شریک

  

لاہور(فلم رپورٹر)ریڈیو کلینک میں پاکستان اسلامک میڈیکل ایسوسی ایشن کے ڈائریکٹر ریلیف پروفیسر ڈاکٹر افضل میاں اور  کنسلٹنٹ کارڈیالوجسٹ میو ہسپتال ڈاکٹر  فرقان یعقوب کی شرکت میزبان اور پروڈیوسر مدثر قدیر تھے۔پروگرا میں دل کی بیماریوں اور ان کے تدارک پر مفصل اظہار کیا گیا اس موقع پر ڈاکٹر افضل میاں کا کہنا تھا کہ دل کے امراض کی وجہ سے ہونے والی اموات میں سے ایک تہائی اموات سڈن کارڈک اریسٹ کی وجہ سے ہوتی ہیں جن کا دائرہ کار تمام عمر میں یکساں ہے۔سڈن کارڈ اریسٹ کی وجہ سے انسان یک دم گرتا ہے اور دماغ کو آکسیجن نہ ملنے کے باعث دماغ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے ایسے انسان کی بحالی میں وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ چانسز کم ہوجاتے ہیں یعنی گرنے کے 2منٹ بعد 80فیصد اور 4منٹ بعد ذندگی کی بحالی کے 60 فی صد چانس رہ جاتا ہے ہمیں اس حوالے سے عوام کو آگاہ کرنے کی ضرورت ہے۔ کہ ایسے مریض کو کیسے ہنگامی طور پر ابتدائی طبی امداد دینا ہے اگر مریض گرنے کے بعد آپ کی بات سن کر آپ کو جواب دے توایسا مریض کارڈ اریسٹ کا شکار نہیں ہوتا۔

کیونکہ اس کا دماغ کام کررہا ہوتا ہے اگر مریض کی طرف سے کوئی اشارہ نہ آئے تو اسے فورا فلیٹ لٹا دیں اس کی ٹانگیں کسی چیز کا سہارا لے کر اونچی کریں دیگر لوگوں کو مدد کے لیے پکاریں اور اپنے ہاتھوں کی ٹو سے اس کی چھاتی کو دبا 30 کر کمپریشن دیں اور اس کے ناک کو پکڑ کر منہ کے ذریعے پھونک ماریں اس وجہ سے اس کے پھپھڑوں میں آکسیجن بھر جائے گی جو مریض کی بحالی میں مددگار ثابت ہوتی ہے۔پروگرام کے دوسرے حصہ میں بات کرتے ہوئے ماہر امراض دل ڈاکٹر فرقان یعقوب کا کہنا تھا کہ پاکستان میں 2019 میں دل کی بیماری سے 2 لاکھ اموات ہوئیں،مراض قلب سے بچنے کیلئے  غذا کا مناسب استعمال کریں،قدرتی غذا کھائیں، پھل اور سبزیوں کا استعمال زیادہ کریں، سگریٹ نوشی سے پرہیز کریں۔ زیادہ کولیسٹرول جسم میں مختلف بیماریوں کو جنم دیتا ہے اور خون کے گھاڑا ہونے سے دل کے امراض میں مبتلا ہونے کے خطرات بڑھ جاتے ہیں ان کا کہنا تھا  اس سے بچنے کیلئے زیتون کا تیل، کنولا آئل، اخروٹ اور ناریل،چاول،انڈے،مکئی کی روٹی،چپاتی کا استعمال کیا جانا چاہیے۔

مزید :

کلچر -