حکومت نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع کی ترقی کیلئے جدوجہد کر رہی ہے: محب اللہ خان 

حکومت نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع کی ترقی کیلئے جدوجہد کر رہی ہے: محب اللہ خان 

  

       پشاور(سٹاف رپورٹر)خیبر پختونخوا کے وزیر زراعت ولائیوسٹاک محب اللہ خان نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت نئے ضم شدہ قبائلی اّضلاع کی ترقی کیلیے تمام تر وسائل بروئے کار لارہی ہے زراعت کی ترقی میں انقلابی منصوبے لانے کیلیے کوشاں ہے زرعی پیداوار کی صلاحیت بڑھانے کیلیے کسانوں اور زمینداروں کو کسان کارڈ کی اجراء نہایت اہم اقدام ہے انہوں نے کہا کہ جاپان حکومت اور اقوام متحدہ کی ادارہ  فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن کی تعاون سے نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع میں زراعت کی ترقی اور کسانوں اور کاشکاروں کو جدید آلات ومشینری کے زریعے فصلوں کی پیداواری صلاحیت بڑھانے کیلیے منصوبے قابل ستائش ہے ہم امید رکھتے ہے مستقبل میں بھی ایف اے او اورجاپان حکومت کیطرف اس طرح کے منصوبے جاری ہیگی ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر زراعت ولائیوسٹاک محب اللہ خان حکومت جاپان اور اقوام متحدہ کی ادارہ ورلڈ فوڈ آرگنائزیشن کی تعاون سے جاری پراجیکٹ''Project for The Restoration of Livelihood in Merged District of Khyber Pakhtunkhwa'' کے تحت خیبر پختونخوا میں ٹڈی کو کنٹرول کرنے کیلیے حکومت خیبر پختونخوا کو آلات حوالگی کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ جاپان حکومت اور JICA نے ہمیشہ مشکل وقت میں پاکستان کی مدد کی ہے سخت حالات میں لسپورٹ کیا ہے خیبر پختونخوا میں دہشتگردی، سیلاب لاوردوسرے قدرتی آفات کے بعد تعلیم، صحت، انفراسٹرکچر اور دوبارہ آبادی کاری میں حکومت جاپان نے اہم کردارادا کیا ہے جوکہ قابل ستائش ہے انہوں نے مذید کہا کہ خیبر پختونخوا حکومت نے دس سالہ فوڈ سیکورٹی پالیسی بنائی ہے جس میں لانگ، شارٹ اور مڈ ٹرم پالیسی شامل ہے وزیراعظم عمران خان بھی پاکستان میں  حکومت جاپان کی تعاون سے خیبر پختونخوا میں جاری منصوبوں سے باخبر ہے اور زراعت کی ترقی کو ترجیحات میں شامل کیا ہے آلات میں 20ہزار لیٹر کیڑے مار سپرے، 170بیٹری کے زریعے چلانے والے سپرے پمپ، 170جنریٹر کے زریعے چلانے والے سپرے پمپ اور مستقبل میں ضم اضلاع میں ٹڈی حملوں پر قابو پانے کیلیے 77موٹر سائیکل شامل ہے صوبائی وزیر نے کہا کہ مذکورہ آلات کی دستیابی سے ٹڈی کو کنٹرول کرنے میں آسانی ہوگی اوراس سے کسانوں کو بھی کافی فائدہ حاصل ہوگا۔ تقریب میں سیکرٹری زراعت خیبر پختونخوا ڈاکٹر محمد اسرار، جاپانی سفارتکار مستودہ کونیوری، جاپان انٹرنیشنل کواپریشن ایجنسی(JICA) کے چیف نمائندہ فوروٹا شیگکی، پاکستان میں ایف اے او کے نمائندہ فلورینسی میری رول,ڈائریکٹر جنرل زراعت توسیع عابد کمال، ڈائریکٹر جنرل لائیو سٹاک توسیع عالمزیب خان اور دیگر نے شرکت کی مذکورہ پراجیکٹ جوکہ اپریل 2018میں شروع ہوا اور 2021میں مکمل ہوجائیگاجس کی کل لاگت 840ملین روپے ہے منصوبے کا بنیادی مقصد نئے ضم شدہ اضلاع میں زریعہ معاش کی بحالی اور زراعت کے شعبہ میں ضم اضلاع میں پیداواری صلاحیت کوبڑھاناہے راجیکٹ کے 32ہزار گھرانے(295000افراد) مستفید ہوچکے ہیں انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت اور وزیراعظم عمران خان کے ویژن مطابق زراعت ولائیوسٹاک کے شعبہ میں انقلابی اصلاحات لارہے ہیں جس سے زرعی پیداوار میں اضافہ کے ساتھ ساتھ کسانوں کیلیے بھی مفید اور مددگار ثابت ہوگی۔

مزید :

صفحہ اول -