رشتہ نہ دینے پر چار افراد کو قتل کرنے والے ملزم کی اپیل مسترد

رشتہ نہ دینے پر چار افراد کو قتل کرنے والے ملزم کی اپیل مسترد

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائی کورٹ میں رشتہ نہ دینے پر ایک ہی گھر کے چار افراد کو قتل کرنے والے ملزم کی بریت کی اپیل مسترد کردی گئی۔منگل کوسندھ ہائی کورٹ میں رشتہ نہ دینے پر ایک ہی گھر کے چار افراد کے قتل کرنے کا کیس کی سماعت ہوئی۔ مجرم افتحار احمد عرف بادشاہ کی سزا موت کے خلاف پر فیصلہ سنا دیا گیا۔ عدالت نے مجرم افتحار احمد عرف بادشاہ کی بریت کی اپیل مسترد کردی۔ ماڈل کورٹ کی جانب سے سزا موت کا فیصلہ برقرار رکھا گیا۔پولیس کے مطابق مجرم خالد ہارون کے بیٹے دانش کا دوست تھا۔ مجرم افتخار احمد نے خالد ہارون کی بیٹی مریم کا رشتہ مانگا۔ رشتے سے انکار پر مجرم نے گھر کے چاروں افراد کو قتل کردیا۔مقتولین میں خالد ہارون، اہلیہ انیلہ، بیٹی مریم اور بیٹا دانش شامل تھے۔ مجرم نے مقتولہ سے بداخلاقی بھی کی۔ مجرم کے خلاف 9 ستمبر 2010 کو مقتول کے بھائی کی مدعیت میں مقدمہ درج ہوا۔9مئی 2019 کو ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج جنوبی ماڈل کورٹ نے فیصلہ سنایا۔ عدالت نے مجرم کوبداخلاقی پر 7 سال کی مزید سزا کا بھی حکم دیا۔سندھ ہائی کورٹ نے مجرم کی دونوں سزاں کو برقرار رکھا ہے۔

مزید :

صفحہ آخر -