فیس بک کی بندش ، اصل میں ہوا کیا تھا اور یہ ڈی این ایس کیا ہے؟ حقیقت سامنے آگئی

فیس بک کی بندش ، اصل میں ہوا کیا تھا اور یہ ڈی این ایس کیا ہے؟ حقیقت سامنے آگئی
فیس بک کی بندش ، اصل میں ہوا کیا تھا اور یہ ڈی این ایس کیا ہے؟ حقیقت سامنے آگئی

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) فیس بک اور اس کی ذیلی سوشل میڈیا کمپنیاں واٹس ایپ اور انسٹاگرام گزشتہ روز 7گھنٹے کے لیے بند رہیں، مگر کیوں؟ دی سن کے مطابق فیس بک ہو یا کوئی ابھی اور ویب سائٹ یا ایپلی کیشن، وہ دنیا میں کسی نہ کسی ’کمپیوٹر سرور‘پر ہوسٹ ہوتی ہے۔ اگر ہم فیس بک ہی کی مثال لیں تو جب آپ اپنے کمپیوٹر کے براﺅزر میں فیس بک ڈاٹ کام کھولتے ہیں تو آپ کے کمپیوٹر کو فیس بک کے سرور کمپیوٹرز سے منسلک کیا جاتا ہے اور فیس بک کی ویب سائٹ آپ کے کمپیوٹر پر کھل جاتی ہے۔ ہر ویب سائٹ کا ایک آئی پی ایڈریس ہوتا ہے، جسے آپ چاہیں تو اپنے ویب براﺅزر میں ٹائپ کر سکتے ہیں۔اس کے ذریعے بھی ویب سائٹ تک رسائی حاصل کی جا سکتی ہے تاہم ہم لوگ عام طور پر ڈومین نیم مثلاً فیس بک ڈاٹ کام کو ترجیح دیتے ہیں کیونکہ انہیں یاد رکھنا آسان ہوتا ہے۔یہیں سے ڈی این ایس (Domain Name System)وجود پاتا ہے۔

جب آپ فیس بک ڈاٹ کام براﺅزر میں لکھتے ہیں اور انٹر کا بٹن دباتے ہیں تو ڈی این ایس اس یو آر ایل کو اس ویب سائٹ کے آئی پی ایڈریس سے میچ کرتا ہے۔ جس کے بعد آپ کا کمپیوٹر فیس بک سے منسلک ہو جاتا ہے۔ جس طرح گزشتہ روز فیس بک، انسٹاگرام اور واٹس ایپ بند رہے، ایسا عام طور پر ڈی این ایس میں کوئی مسئلہ آنے پر ہوتا ہے۔ ڈی این ایس صارفین کے کمپیوٹرز کو فیس بک کے آئی پی ایڈریس سے منسلک نہیں کر پاتا۔ ڈی این ایس سرورز انٹرنیٹ کے لیے فون بک کی طرح ہوتے ہیں۔ تاہم اس مقصد کے لیے ایک اور سسٹم بھی ہے جسے بی جی پی (Border Gateway Protocol)کہا جاتا ہے۔ یہ سسٹم ڈی این ایس ہی کی طرح کام کرتا ہے تاہم یہ کچھ میپس کا استعمال کرتا ہے اور صارفین کو بہترین روٹ سے مطلوبہ ویب سائٹ کے ڈی این ایس فون بک تک پہنچاتا ہے۔ یہ بالکل گوگل میپس کی طرح ہوتا ہے جو آپ کے ڈیٹا کو ’یہاں سے دائیں مڑیں اور یہاں سے بائیں مڑیں‘ کی طرح ہی گائیڈ کرتا ہے۔ انٹرنیٹ کی دنیا میں کئی بی جی پی سسٹمز کام کر رہے ہیں اور فیس بک اپنا بی جی پی سسٹم بھی رکھتا ہے تاکہ اس کے صارفین کو آسانی رہے۔ 

تو گزشتہ روز کیا غلط ہوا؟ ہوا کچھ یوں کہ فیس بک نے بی جی پی سسٹم سے کہا کہ وہ اسے انٹرنیٹ کے میپس سے ہٹا دے۔ یقینا یہ ایک بہت بڑی غلطی تھی۔ جب یہ میپس نہیں ہوں گے تو بی جی پی اور ڈی این ایس کام نہیں کریں گے اور کوئی صارف فیس بک کے سرورز تک رسائی حاصل نہیں کر سکے گا۔درحقیقت فیس بک کی طرف سے یہ اقدام ایک اپ ڈیٹ کے لیے اٹھایا گیا جو غلط ثابت ہوا۔بنیادی طور پر فیس بک کے اپنے راﺅٹرز ، جو فیس بک سرورز کو انٹرنیٹ سے منسلک کرتے ہیں، کی کنفیگریشن غلط ہو گئی تھی، جس کی وجہ سے فیس بک کے ساتھ ساتھ جتنی ویب سائٹس اور ایپلی کیشنز فیس بک کے سرورز پر تھیں، ان سب تک صارفین کی رسائی بند ہو گئی۔ 

مزید :

سائنس اور ٹیکنالوجی -