نیشنل ٹیکسٹائل یونیورسٹی کے طلبہ عالمی معیار کی مصنوعات پر توجہ دیں

نیشنل ٹیکسٹائل یونیورسٹی کے طلبہ عالمی معیار کی مصنوعات پر توجہ دیں

فیصل آباد (بیورورپورٹ)صدر فیصل آبادچیمبر چوہدری محمد نوازنے کہا ہے کہ عالمی سطح پر فیصل آباد کی ٹیکسٹائل انڈسٹری کی مقبولیت کو برقرار رکھنے کیلئے اس شعبہ میں نئی اختراعات ، تنوع اور جدیدیت کے ساتھ ساتھ اچھوتے طرز فکر کی بھی ضرورت ہے اور اس سلسلہ میں نیشنل ٹیکسٹائل یونیورسٹی کے طلبہ کو اپنے علم عالمی ضروریات اور تقاضوں کے عین مطابق نئی خوبیوں والی مصنوعات تیار کرنے پر توجہ دینا ہوگی۔ وہ نیشنل ٹیکسٹائل یونیورسٹی کے شعبہ ڈیزائن کے زیر اہتمام فائنل ایئر کے طلبہ کے پراجیکٹ ڈسپلے کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے جس میں یونیورسٹی کے ریکٹر ڈاکٹر تنویر حسین، رجسٹرار ظفر جاوید، ہیڈ آف دی ڈیپارٹمنٹ عمر حمید اور ٹیکسٹائل کی صنعت سے وابستہ افراد نے بھی بڑی تعداد میں شرکت کی۔ چوہدری محمد نواز نے خاص طور پر یونیورسٹی کی طالبہ کی طرف سے تیار کردہ انٹی الرجی ڈریس کو سراہا اور کہا کہ اس قسم کی انوکھی اور مفید ایجادات سے نہ صرف اندرون ملک کھپت کو بڑھایا جا سکے گا بلکہ ان کی برآمد سے قیمتی زر مبادلہ بھی کمایاجا سکے گا۔

اس موقع پر انہیں بتایا گیا کہ یونیورسٹی کے ایک اور طالب علم نے ایسی بیڈ شیٹ بھی تیار کی ہے جس کے استعمال کے باوجود نہ تو اس پر سلوٹ پڑتی ہے اور نہ ہی اس پر داغ دھبے لگتے ہیں۔ انہیں مزید بتایاگیا کہ یونیورسٹی کی ایک اور طالبہ نے جدید طرز کاکرتا شلوار ڈیزائن کیا ہے اور خوشی کی بات ہے کہ تین مختلف نجی کمپنیوں نے موقع پر ہی اس ڈیزائن کو اپنے برانڈ کیلئے خرید لیا ہے اور اب وہ اپنے برانڈ کے تحت اس کی فروخت شروع کریں گے۔ انہیں بتایا گیا کہ سیالکوٹ کی ایک فٹ بال بنانے والی کمپنی نے نیشنل ٹیکسٹائل یونیورسٹی کی ہونہار طالبہ کو کنسلٹینسی دینے کا بھی فیصلہ کیا۔ یہ طالبہ پاکستان سے برآمد ہونے والے فٹ بال کے کلر ڈیزائن کرے گی۔ چوہدری محمد نواز نے کہا کہ یہ بات باعث اطمینان ہے کہ نیشنل ٹیکسٹائل یونیورسٹی کے ہونہار طلبہ میں تخلیقی صلاحیتیں بدرجہ اتم موجود ہیں اور اسی وجہ سے انہیں ٹیکسٹائل کے شعبہ کی طرف سے عملی پذیرائی اور تعاون بھی مل رہا ہے۔ ارشد گروپ کے شہزاد اے شیخ نے اس پراجیکٹ ڈسپلے کا افتتاح کیا اور طلبہ کے تخلیقی کاموں کو سراہا۔

مزید : کامرس