ایف پی سی سی آئی کے ریجنل آفس میں نوجوان کاروباری خواتین کیلئے سیمینار

ایف پی سی سی آئی کے ریجنل آفس میں نوجوان کاروباری خواتین کیلئے سیمینار

لاہور (کامرس رپورٹر)فیڈریشن آف پاکستان چیمبر زآف کامرس اینڈ انڈسٹری (ایف پی سی سی آئی )کے ریجنل آفس میں ’’ نوجوان خواتین میں کاروبار فروغ دینے کی صلاحیت کی تعمیر اور ایس ایم ایز کیلئے طویل مدتی ملکاری کی سہولتیں ‘‘ کے عنوان سے خصوصی سمینار منعقد کیا گیا۔تقریب کے مہمان خصوصی ایف پی سی سی آئی ریجنل چےئرمین میاں رحمان عزیز نے مختلف یونیورسٹی کے طلباء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ایس ایم ایز انڈسٹری میں سرمایہ کاری اور نئی ٹیکنالوجی متعارف کئے بغیر ملکی معیشت کو مستحکم نہیں کیا جا سکتا۔خواتین کو قومی دھارے میں شامل کئے بغیر اقتصادی ترقی ناممکن ہے،دنیا کے اکثر ممالک معاشی نمو کی شرح بڑھانے کی دوڑ میں کمزور طبقات کو نظر انداز کر رہے ہیں جس سے غربت اور محرومی میں اضافہ ہو رہا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی غربا کی اکثریت خواتین پر مشتمل ہے جس کی وجہ سے عدم مساوات،امتیازی سلوک،قرضہ کی سہولتوں کا فقدان،ملکوں کے مابین تجارت کے بجائے مخالفت پر زور اور ارباب اختیار کی عدم دلچسپی ہے۔انہوں نے مزید کہاکہ فیڈریشن چیمبر میں ایس ایم ایز ڈیسک کا مقصد بزنس کمیونٹی کی ٹیکنالوجی ،ایسٹ اور فنانس سے متعلق معلومات کے لئے معاونت کرنا ہے۔ کسی بھی ملک کی صنعتی اور اقتصادی ترقی کے لیے ایس ایم ایزکی اہمیت کو کبھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ۔

ایف پی سی سی آئی قائمہ کمیٹی برائے ایس ایم ایز کے چےئرمین رحمت اللہ جاوید نے کہاکہ ایس ایم ایزمجموعی طور پر 90%کاروباری اداروں پر محیط ہے۔ اور 80%زرعی ملازمت کا انحصار ایس ایم ایزپر ہے۔ سالانہ جی ڈی پی میں ایس ایم ایز کا 40% حصہ ہے ، آنے والے دنوں میں ایس ایم ایز سیکٹر پاکستان میں غربت کے خاتمے میں اہم کردار ادا کرے گا تو یہ کہنا غلط نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ اندرونی اور بیرونی مشکلات کے باوجود ملک کی سماجی و اقتصادی ترقی کے لیے موثر کردار ادا کیا ہے۔ ایف پی سی سی آئی نے رواں سال وزیراعظم جناب نوازشریف صاحب کو معیشت کی بحالی کے لیے منصوبہ پیش کیا۔ ایف پی سی سی آئی میں یورپی یونین کے ممالک سے برآمد کنندگان کی سہولت کے لیے جی ایس پی پلس ڈیسک کا قیام کیا گیا ۔ کینےئرڈ کالج کی پروفیسرفرح عامر نے کہا کہ ایف پی سی سی آئی میں NTM Desk&SMEs/SS Gate Desk کا قیام ایس ایم ای کے فروغ کے لیے اہم قدم ہے ۔

مزید : کامرس