آسٹریلیامیں پولیس افسرکے قتل کا منصوبہ بنانے والے نوجوان کو دس برس قید

آسٹریلیامیں پولیس افسرکے قتل کا منصوبہ بنانے والے نوجوان کو دس برس قید

کینبرا(این این آئی)آسٹریلیا میں ایک 19 سالہ نوجوان کو ایک پولیس افسر کو کچلنے اور پھر اس کا سر قلم کرنے کی منصوبہ بندی کے الزام میں 10 برس قید کی سزا سنائی گئی ۔میڈیارپورٹس کے مطابقمیلبورن میں سیودت رمضان بیسم کا ارادہ تھا کہ وہ اپریل میں اینزیک ڈے کی تقریبات کے دوران یہ حملہ کرتے، یہ دن آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کی پہلی جنگِ عظیم میں شرکت کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ان پر دہشت گردی کا منصوبہ بنانے کی فرد جرم عائد کی گئی۔بیسم نے اپنے اس منصوبے کے بارے میں برطانیہ میں ایک دوسرے نوجوان سے بات کی تھی جسے اس سال کے آغاز میں عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے۔بلیک برن کے تعلق رکھنے والے اس 15 سالہ نوجوان کا نام ظاہر نہیں کیا گیا تاہم وہ برطانیہ میں دہشت گردی کے الزام میں مجرم قرار دیا جانا والے سب سے کم عمر فرد ہے۔انھیں دہشت گردی پر اکسانے کے الزام میں پانچ برس تک قید کاٹنا ہوگی اس کے بعد اگر یہ طے پایا کہ وہ اب مزید خطرناک نہیں رہے تو انھیں رہا کیا جائے گا۔عدالت کو بتایا گیا کہ ان دونوں نوجونوں نے آپس میں مذاقاً یہ بھی کہا کہ کینگروز کے جسم میں بنی تھیلی میں دھماکہ خیز مواد ڈال کر اسے پولیس افسروں کی جانب بھگایا جائے۔

مزید : عالمی منظر