پنجاب میں حقوق اطفال کیلئے’’ پارلیمانی کاسس‘‘ بنانے کا فیصلہ

پنجاب میں حقوق اطفال کیلئے’’ پارلیمانی کاسس‘‘ بنانے کا فیصلہ

ملتان(سٹاف رپورٹر)صوبہ پنجاب میں حقو ق اطفال کے موثر تحفظ کے لیے پارلیمانی کاسس ((caucusبنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔صوبائی محتسب کے چیف کمشنر برائے اطفال (بقیہ نمبر37صفحہ7پر )

کے زیر انتظام اراکین اسمبلی پر مشتمل یہ کاسس چائلڈ رائٹس کے مختلف پہلوؤں کا جائزہ لے کر جامع پالیسی پلیٹ فارم کے طور پر کام کرے گا۔اسی طرح بہبوداطفال کے لیے درکارضروری قانونی ، سماجی وانتظامی معاونت کو بھی یقینی بنایا جائے گا تاکہ بچوں کو نشوونما کے لیے موافق ماحول ملے۔ اس کاسس کے ممبران حقوق اطفال کے لیے دیگر متعلقہ اداروں سے قریبی اشتراک عمل رکھیں گے‘یہ فیصلہ چیف صوبائی کمشنر برائے اطفال نسرین فاروق ایوب کی زیر صدارت لاہور میں اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں چےئرمین پنجاب ایجوکیشن فاؤنڈیشن قمرالاسلام راجہ، اراکین صوبائی اسمبلی اور مختلف سرکاری و نجی اداروں کے نمائندوں نے شرکت کی ۔ قمرالاسلام نے اپنے خطاب میں پنجاب ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی جانب سے36اضلاع میں 21لاکھ سے زائد مستحق بچوں کی مفت تعلیم کو اہم پیش رفت قرار دیااور کہاکہ صوبہ پنجاب نے فروغ تعلیم کے ذریعے چائلڈ فرینڈلی معاشرے کی بنیاد رکھ دی ہے۔انہوں نے کہا کہ حقوق اطفال کے بارے میں عوامی آگاہی بڑھانے کی ضرورت ہے،اس حوالے سے میڈیا ، علماء کرام اوراساتذہ سمیت تمام سماجی متعلقین کو اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ بچے ہمارے محفوظ مستقبل کے ضامن ہیں۔ ان بچوں کو تعلیم کے ذریعے بہترین انسان کے طور پر ڈویلپ کیا جائے تو پاکستان عالمی برادری میں اہم مقام حاصل کر سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ چائلڈ لیبر ایک سماجی برائی ہے، ہمیں چاہیے کہ اپنے ارد گرد سکولوں سے باہر بچوں کو سکول واپس لانے میں حکومت کی معاونت کریں تاکہ پاکستا ن کو غربت و جہالت کے اندھیروں سے نجات ملے۔قمرالاسلام نے مزید بتایا کہ ایجوکیشن سیکٹر ریفارم پروگرام کے دوسرے مرحلے میں سکولوں کا معیار تعلیم بہتر بنانے کا عمل تیزی سے جاری ہے۔حکومت کی کوشش ہے کہ جامع پالیسی میکنزم کے ذریعے اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ کوئی بچہ غربت یا وسائل کی کمی کی بناء پر تعلیم سے محروم نہ رہے اور کوئی طاقت ور اس کا استحصال کرنے کی جرات نہ کرے۔قبل ازیں اراکین صوبائی اسمبلی کے علاوہ نسرین فاروق ایوب ، احسان غنی، عبدالباسط، سید علی گیلانی ، مس شاہین عتیق الرحمٰن اور دیگر شرکاء نے اجلاس سے خطاب کیااور پارلیمانی کاسس کے قیام کے حوالے سے اپنی تجاویز دیں۔

پارلیمانی کاسس

مزید : ملتان صفحہ آخر