نوجوان لڑکی نے اپنے جسم کے ایک ایسے حصے کی انشورنس کروالی کہ آپ نے ایسا سنا تو کیا کبھی سوچا بھی نہ ہوگا، کچھ ہوگیا تو 14 کروڑ روپے ملیں گے کیونکہ۔۔۔

نوجوان لڑکی نے اپنے جسم کے ایک ایسے حصے کی انشورنس کروالی کہ آپ نے ایسا سنا تو ...
نوجوان لڑکی نے اپنے جسم کے ایک ایسے حصے کی انشورنس کروالی کہ آپ نے ایسا سنا تو کیا کبھی سوچا بھی نہ ہوگا، کچھ ہوگیا تو 14 کروڑ روپے ملیں گے کیونکہ۔۔۔

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ کی ایک انشورنس کمپنی کچھ ایسی چیزوں کی انشورنس کرتی ہے جس کا ہمارے ہاں تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔ اس کمپنی کا نام لوائیڈ(Lloyd) ہے جو انسانی جسم کے مختلف اعضاءاور بافتوں کی انشورنس بھی کرتی ہے اور اگر ان اعضاءاور بافتوں کو کچھ ہو جائے تو رقم ادا کرتی ہے۔ اب اس کمپنی سے معروف چاکلیٹ کمپنی کیڈبری کی ایک ورکر نے اپنی ذائقہ محسوس کرنے والی بافتوں کی انشورنس کروا لی ہے۔ اس ورکر کا نام ہیلی کرٹس ہے جو کیڈبری کے کے ہیڈآفس میں کام کرنے والی ان سائنسدانوں کی ٹیم کا حصہ ہے جو چاکلیٹ کے نئے ذائقہ ایجاد کرتے ہیں۔ انہیں چونکہ ان ذائقوں کو خود ہی ٹیسٹ بھی کرنا ہوتا ہے چنانچہ ان کی ذائقے کی حس متاثر ہونے کا خدشہ ہوتا ہے۔ اب اگر ہیلی کرٹس کی بافتوں کو کوئی نقصان پہنچتا ہے تو انشورنس کمپنی اسے 10لاکھ پاﺅنڈ(تقریباً14کروڑ روپے) ادا کرے گی۔

نوجوان لڑکی نے نسوانی حسن میں اضافے کیلئے شوہر کے 9 لاکھ روپے لگوا دئیے، لیکن پھر سرجری ہوتے ہی ایسا کام کردیا کہ آدمی کو زندگی کا سب سے بڑا جھٹکا دے دیا

اس انشورنس میں کمپنی نے ہیلی پر کچھ شرائط بھی عائد کی ہیں۔ ان شرائط کے مطابق اب وہ چٹ پٹے کھانے، تیز مرچ مصالحوں والی مچھلی اور گوشت وغیرہ نہیں کھا سکتی۔ واضح رہے کہ ہیلی کرٹس اس کمپنی کی پہلی کلائنٹ ہے جس نے اپنی بافتوں کی انشورنس کروائی ہے۔ہیلی کرٹس کا کہنا ہے کہ ”میں کیڈبری کھاتے ہوئے بڑی ہوئی ہوں۔ اس چاکلیٹ نے میری زندگی کے ہر مرحلے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ میرے لیے یہ اعزاز کی بات ہے کہ میں کیڈبری کے عالمی ہیڈکوارٹرزمیں سائنسدانوں کی اس ٹیم کا حصہ ہوں جن کا کام چاکلیٹ کے نئے ذائقے تیار کرنا ہے۔انشورنس کروانے کے بعد اب میں پہلے سے بھی خوش ہوں کہ بغیر کسی خدشے کے اپنا کام سرانجام دے سکتی ہوں۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس