میاں نواز شریف کی فیکٹری اور غریب مصری

میاں نواز شریف کی فیکٹری اور غریب مصری
میاں نواز شریف کی فیکٹری اور غریب مصری

  

گاڑی کا ایک پرزہ لینے کے لیے گاڑیوں کی سکریپ مارکیٹ میں جانا ہوا۔مدینہ منورہ سے تھوڑا باہر "اسکریپ گاڑیوں" کی یہ بہت بڑی مارکیٹ ہے،جہاں ایک سے ایک گاڑی ہوتی ہے۔سعودی عرب میں چوں کہ ایکسڈینٹ کا ریشو کچھ زیادہ ہے،اس لیے عموما اچھی خاصی نئی گاڑیاں تک لوگ ایکسڈنٹ کے بعد سکریپ میں بیچ دیتے ہیں۔جن کے نہ صرف پارٹس بکتے ہیں بلکہ سکریپ بھی خوب بکتاہے۔ڈھونڈتے ڈھونڈتے ایک گودام میں مطلوبہ پارٹ مل گیا۔گودام کاملازم مصری تھا جو عرصہ دس سال سے یہاں مدینہ میں سکریپ کے کام سے جڑا تھا۔راقم نے پوچھا اتنی گاڑیوں کا سکریپ آخر کون خریدتا ہے؟یا یوں ہی گاڑیاں گل سڑ جاتی ہیں؟کیوں کہ پاکستان کی طرح نہ یہاں ریڑھی بان گھرگھرجاکرپرانا،لوہا،لیلون،پلاسٹک خریدتے ہیں اور نہ وافر مقدار میں سکریپ کی دکانیں ملتی ہیں۔بارہا پرانی اور ایکسڈنٹ گاڑیوں کے گلنے سڑنے کا مشاہدہ ہوا۔

مصری ملازم نے فورا کہا کہ وہ جو پاکستان کے وزیراعظم ہیں ان کی فیکٹری جدہ میں ہے جو مشرق وسطٰی کی سب سے بڑی سکریپ فیکٹری ہے۔سارا سکریپ وہی خریدتے ہیں۔مصری کو نام یاد نہیں تھا پوچھا کیا نام ہے پاکستان کے وزیر اعظم کا؟ کہا کہ میاں محمد نواز شریف۔

غریب مصری کہنے لگا کہ وہ  بہت مالدار ہیں؟

عرض کیا کہ وہ اتنے مالدار نہیں،کیوں کہ نہ ان کے پاس ذاتی گھر ہے،نہ ذاتی گاڑی اور  نہ ہی کوئی  ذاتی  جائیداد ، وہ تو  بس مانگی تانگی اور گفٹ شدہ چیزوں پر ہی  گزارا کرتے ہیں۔

"مصری کہنے لگا سب جھوٹ اور فراڈ ہے"۔

اگلے ہی لمحے خیال آیا کہ"مالدارفقیروں" بالخصوص جووزیر اعظم بھی ہوں ان کے فقر سے پردہ اٹھانا اچھا نہیں ہے۔کیوں کہ دنیا ایسے "فقیروں"کو خوب جانتی ہے۔

آج کل پانامہ لیکس اور میاں برادران کی فیکٹریوں کاخوب چرچا ہورہاہے۔حیرت اس بات پر ہے کہ آخر کیوں میاں برادران اپنی ذاتی فیکٹریوں اور جائیدادوں کو تسلیم نہیں کرتے اور اگر کبھی حقائق آنے کے بعد کچھ تسلیم بھی کرتے ہیں تو گفٹ شدہ کہہ کر خود کو غریب ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں،جس سے لوگ یہی سمجھ رہے ہیں کہ یہ ساری فیکڑیز اور جائیدادیں غلط طریقے سے بنائی گئی ہیں۔بزنس کرنے میں کوئی عیب نہیں،معیوب آپ تب ٹھہرتے ہیں جب بزنس مروجہ جائز اور قانونی طریقوں سے بالا ہوکر کریں۔غور طلب بات یہ ہے کہ انگلینڈ،سعودی عرب،پاکستان اور انڈیا میں کاروباری کمپنیاں ہونے کے باوجود میاں صاحب اپنے اثاثے چند لاکھ بھی ظاہر نہیں کرتے اور کہتے ہیں کہ رائیونڈ کا محل اور تمام کمپنیوں میں ان کا کچھ بھی نہیں،یاتو ان کے بیٹوں کا ہے یا پھر لوگوں نے ہدیتادیا ہے۔دن کی روشنی میں لوگ وزیر اعظم کی اس ’’وضاحت ‘‘پر تبھی اعتماد نہیں کرتے کہ آج چھوٹا سا گھر چلانے کے لیے ایک غریب آدمی کو اتنے پاپڑ بیلنے پڑتے ہیں تو دوسری طرف  ایک میاں صاحب ہیں کہ جن کی نہ صرف دنیا میں بڑی بڑی کمپنیاں چل رہی ہیں بلکہ وہ پاکستان کی سب سے بڑی سیاسی پارٹی اور ملک کی گاڑی کوبھی،بغیر کسی جائیداد اور ذاتی پیسوں کے چلارہے ہیں۔

اس ضمن میں اپوزیشن،بالخصوص عمران خان اور طاہر القادری کا احتجاج بالکل بجا ہے،جو کم ازکم لوگوں کے سامنے اصل حقیقت بیان کرکے لوگوں کو آگاہی دے رہے ہیں۔آپ عمران خان اور طاہر القادری کو جتنا چاہے برابھلا کہہ لیں لیکن یہ لوگ کم ازکم دیگر اپوزیشن یا حکومتی اتحادی جماعتوں سے بہت بہتر ہیں،کیوں کہ دیگر اپوزیشن جماعتیں سب کچھ جاننے کے باوجود محض مفاہمت اور ذاتی مفادات کی آڑ میں ملکی سالمیت داؤ پر لگنے کے باوجود اپنا منہ بند رکھتی ہیں۔یہی وجہ ہے کہ ملک میں بھارتی ایجنٹوں کی دہشت گردی سے عام لوگوں کا خون بہہ رہا ہے۔اس سارے قضیے کے سامنے آجانے کے بعد عوام کو خواب غفلت سے بیدار ہوجانا چاہیے اور اپنے نمائندوں کو منتخب کرنے کے لیے یہ عزم کرنا چاہیے کہ وہ جھوٹ اور مفاد پرست لوگوں کا بائیکاٹ کریں گے،چاہے ایسے لوگوں کا تعلق کسی بھی پارٹی سے ہو۔عوام کی رائے ہموار کرنے کے لیے سنجیدہ لوگوں کو بھی بغیر کسی تعصب اور لالچ کے کوششیں کرنا ہوں گی،علمائے کرام کو مساجد کے منبر ومحراب سے لوگوں کو سچ کا ساتھ دینے کی ترغیب دینی ہوگی تاکہ کوئی مصری شہری ہمارے ملک کے وزیراعظم کو نہ تو جھوٹا کہہ سکے اور نہ ہی کوئی گورا ہمارے ملک پر بددیانتی کا لیبل لگاسکے۔

غلام نبی مدنی المدینہ انٹر نیشنل یونیورسٹی میں تخصص فی الفقہ والادب (مفتی) کے طالبعلم ہیں اور اسلامی موضوعات پر قلم اٹھاتے رہتے ہیں۔ ان سے gmadnig@gmail.com پر رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

مزید : بلاگ