دن میں کتنی دفعہ باتھ روم جانا پڑے تو یہ سنگین بیماری کی نشانی ہے ؟ سائنسدانوں نے وہ بات بتا دی جو آپ کو ضرور معلوم ہونی چاہیے

دن میں کتنی دفعہ باتھ روم جانا پڑے تو یہ سنگین بیماری کی نشانی ہے ؟ ...
دن میں کتنی دفعہ باتھ روم جانا پڑے تو یہ سنگین بیماری کی نشانی ہے ؟ سائنسدانوں نے وہ بات بتا دی جو آپ کو ضرور معلوم ہونی چاہیے

  

سڈنی(نیوز ڈیسک)رفع حاجت کے لئے آپ دن میں کتنی بار ٹوائلٹ کا رخ کرتے ہیں؟ کچھ لوگوں کے لئے تو ایک بار ہی کافی ہوتی ہے، کچھ دوبار بھی جاتے ہیں، اور کچھ تو ایسے بھی ہوتے ہیں کہ جو دو دن میں ایک بار رفع حاجت کرتے ہیں۔ تو ایسے میں یہ بات یقیناً سوچنے والی ہے کہ دن میں کتنی بار رفع حاجت نارمل ہے؟

میل آن لائن کے مطابق تحقیقاتی جریدے ’’دی کنورسیشن‘‘ میں شائع ہونے والے ایک مضمون میں آسٹریلیا سے تعلق رکھنے والے چار گیسٹرو اینٹرولوجسٹ ڈاکٹروں اور ایک دیگر تحقیق کار نے اپنی رائے دی ہے کہ رفع حاجت کی ضرورت مختلف لوگوں کے لئے مختلف ہوتی ہے۔ بعض لوگوں کے لئے دن میں ایک بار نارمل ہے تو بعض کے لئے دو سے تین بار، اور یہ بھی ضروری نہیں ہے کہ ہم روزانہ رفع حاجت کریں۔اگر ہم روزانہ رفع حاجت نہیں کرتے تو اس سے ہمارے نظام انہضام یا آنتوں کو کوئی نقصان پہنچنے کا خطرہ نہیں ہوتا، البتہ جو لوگ پورے ہفتے میں تین بار سے کم رفع حاجت کرتے ہیں اُن کی صحت کو ضرور سنگین خطرہ لاحق ہوتا ہے۔

ڈیکن یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے سائنسدان کریس ٹوفر ہیئر کا بھی کہنا ہے کہ یہ بات ٹھیک ہے کہ کچھ لوگوں کیلئے روزانہ رفع حاجت نارمل بات ہے تو کچھ لوگوں کیلئے ہر دوسرے دن رفع حاجت کرنا بھی نارمل ہے۔ تقریباً 40 فیصد لوگوں ایسے ہیں جو روزانہ ایک بار رفع حاجت کرتے ہیں۔ اس کے برعکس 60فیصد ایسے ہیں جنہیں روزانہ رفع حاجت کی ضرورت نہیں ہوتی۔ انہوں نے اس فرق کو معمول کی بات قرار دیا، البتہ ان کا کہنا تھا کہ اگر ہفتے میں تین بار سے کم رفع حاجت کی جائے تو یہ ضرور پریشانی کی بات ہے کیونکہ اس کا مطلب ہے کہ آپ کے نظام انہضام میں کوئی سنگین خرابی ہے۔ ہفتے میں تین بار سے کم رفع حاجت کرنے کی صورت میں آنتوں اور نظام انہضام کے دیگر حصوں کو نقصان پہنچنے کا خطرہ بھی ہوتاہے۔

ماہرین نے اس تحقیق کی روشنی میں بتایا ہے کہ نظام انہضام کو متحرک رکھنے اور قبض سے بچنے کیلئے ضروری ہے کہ آپ زیادہ فائبر والی غذاؤں کا استعمال کریں، مثلاً سبزیاں ، پھل ، مکمل اناج وغیرہ۔ کوشش کریں کہ قبض سے نجات کیلئے آپ کو ادویات کا سہارا نہ لینا پڑے۔ اس کے لئے پانی زیادہ سے زیادہ پیءں اور باقاعدگی سے ورزش کو اپنا معمول بنائیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /تعلیم و صحت