مسائل حل نہ ہونے سے ویلیو ایڈڈانڈسٹری بندہورہی ہے‘ اپٹپما

مسائل حل نہ ہونے سے ویلیو ایڈڈانڈسٹری بندہورہی ہے‘ اپٹپما

  



لاہور(نیوزرپورٹر)اپٹپماکے ریجنل چیئرمین نے کہا ہے کہ ایف بی آر کے تحت جاری ہونے والے نئے قوانین کے تحت جب تک ٹریڈرز اور پروسیسرز سیلز ٹیکس رجسٹریشن حاصل نہیں کرتے تب تک ٹیکسٹائل پروسیسنگ انڈسٹری کو چین مکمل نہ ہو نے کے باعث مشکلات کاسامنا رہے گاجس کی وجہ سے ویلو ایڈڈٹیکسٹائل پروسیسنگ انڈسٹری مجبورا ً بند ہو رہی ہے کیونکہ ٹیکسٹائل کی صنعت میں ٹریڈر کا کام کرنے والے مڈل مین کاکردار بے حد اہم ہے جو ایک انجانے خوف کے باعث ابھی تک شناختی کارڈ کی کاپی کی فراہمی کی شرط کو قبول نہیں کر رہا۔

جس کے اثرات اس سے منسلک، یارن، پاور لومز، گرے کلاتھ، سائزنگ اور پروسیسنگ سیکٹر پر شدت کے ساتھ رونماہو رہے ہیں۔ ان خیات کا اظہار آل پاکستان ٹیکسٹائل پروسیسنگ ملز ایسوسی ایشن کے ریجنل چیئرمین چوہدی حبیب احمد گجر نے اپنے ایک بیان میں کیا۔انہوں نے کہا کہ ان حالات میں نہ صرف صنعتکار، بلکہ ہر کاروباری شخص پریشانی میں مبتلاہے اور یوں لگتاہے وزیراعظم عمران خان کے ویثرن کو بیوروکریسی سمجھنے سے قاصر ہے اور خدانخواستہ یہی حالات رہے تو ویلوایڈڈ ٹیکسٹائل پروسیسنگ اور اس سے منسلک انڈسٹری اور دیگر کاروباری ادارے جلد بند ہو جائیں گے۔انہوں نے کہاکہ بہترین راستہ تو یہ تھا کہ مجوزہ شرائط کے نفاذ سے قبل ان سے منسلک سٹیک ہولڈرز سے مشاورت کی جاتی،اور ان کاموقف بھی سناجاتااور پھر کوئی فیصلہ ہوتامگر ٹیکسٹائل کے جملہ سیکٹرز سے مشاورت کئے بغیر پالیسیاں مرتب کر کے ان کانفاذ کر دیاگیاہے جس کے بدترین اثرات آج کاروباری جمود کی صورت اختیار کر چکے ہیں۔ اب بھی وقت ہے کہ پالیسیاں بنانے والے اپنی پالیسیوں پر نظر ثانی کرکے کوئی درمیانی راستہ نکالیں، یہ اس لیے بھی ضروری ہے کہ مہنگائی کے باعث ہر شہری پریشان ہے جبکہ حکومت کامقصد عوام کی فلاح و بہبود ہوناچاہیے گورنمنٹ غیر رجسٹرڈ افراد کو جلد از جلد رجسٹرڈ کرکے ٹیکسٹائل کی صنعت کاپہیہ رواں دواں رکھے۔

مزید : کامرس


loading...