مجھے پسند ہے

    مجھے پسند ہے
    مجھے پسند ہے

  

                                                                                                                        مجھے پسند ہے

اُجڑے جزیرے،کالا رنگ

چھوٹے بچے، بوڑھے لوگ

ویران رستے، زدر پتے،اداس شامیں 

مجھے پسند ہے

تنہائی سے باتیں کرنا

خاموشی سے اشکوں کو بہانا

اپنی اذیتوں کی پرتیں کھولنا

مجھے  پسند ہے

دھند میں بیٹھ کے قیاس آرائی کرنا

وہ اس لیے

کہ  میں اس سے مجھ کو

اپنائیت محسوس ہوتی ہے

شاعرہ : حنا شہزادی

Mujahay Pasand Hay

Ujrray Jazeeray, Kaala Raang

Chhotay Bachay, Borrhay Log

Veraan Zazeeray, Zard Pattay, Udaas Shaamen

Mujhay Pasand Hay

Tanhaai Say Baaten Karna

Khaamoshi Say Ashkon Ko Bahaana

Apni Aziyaton Ki Parten Kholna

Mujhay Pasand Hay

Dhund Men Beth K Qayaas Aaraai Karna

Wo Iss Liay

Keh Iss Men Mujh Ko

Apnaaiat Mehsoos Hoti Hay

Poet: Hina Shehzadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -