گھر جب بنا لِیا تِرے در پر، کہے بغیر

گھر جب بنا لِیا تِرے در پر، کہے بغیر
گھر جب بنا لِیا تِرے در پر، کہے بغیر

  

گھرجب بنا لِیا تِرے در پر، کہے بغیر

جانے گا اب بھی تو نہ مِرا گھر، کہے بغیر

کہتے ہیں، جب رہی نہ مجھے طاقتِ سُخن

جانوں کسی کے دِل کی میں کیوں کر، کہے بغیر

کام اُس سے آ پڑا ہے کہ، جس کا جہان میں

لیوے نہ کوئی نام، ستم گر کہے بغیر

جی میں ہی کچھ نہیں ہے ہمارے، وگرنہ ہم

سر جائے یا رَہے، نہ رہیں پر ، کہے بغیر

چھوڑوں گا میں نہ اُس بُتِ کافر کا پُوجنا

چھوڑے نہ خلق گو مجھے کافَر کہے بغیر

مقصد ہے ناز و غمزہ، وَلے گفتگو میں کام

چلتا نہیں ہے، دُشنہ و خنجر کہے بغیر

ہر چند ہو مشاہدۂ حق کی گفتگو

بنتی نہیں ہے، بادہ و ساغر کہے بغیر

بہرا ہُوں میں، تو چاہیے دُونا ہو اِلتفات

سُنتا نہیں ہُوں بات مکرّر کہے بغیر

غالب! نہ کر حضور میں تو بار بار عرض

ظاہر ہے تیرا حال سب اُن پر کہے بغیر

شاعر: مرزا غاالب

Ghar Jab Bana Lia Hay Tiray Dar Par Kahay Baghair

Jaanay Ga Ab Bhi Tu Na Mira Ghar Kahay Baghair

Kehtay Hen Jab rahi Na Mujhay taaqat  e  Sukhan

Jaanu Kisi K Dil Ki Main Kiun Kar Kahay Baghair

Kaam Uss Say Aa Parra Hay Keh Jiss Ka Jahaan Men

Leway Na  Koi Naam Sitamgar Kahay Baghair

Ji Men Hi Kuch Nahen Hay Hamaaray Wagarna Ham

Sar Jaey Yaar Hay , Na Rahen  Par , Kahay Baghair

Chhorun G aMain Na Uss But e Kaafir Ka Poojna

Chhorray Na Khalq , Go Mujhay kaafir Kahay Baghair

Maqsad Hay Naaz o Ghamza , Walay Gufagu Men Kaam

Chalta Nahen hay Dushna o Khanjar Kahay Baghair

Har Chand Ho Mushaahida e Haq Ki Guftagu

Banti Nahen Hay Baada o Saaghar Kahay Baghair

Behra Hun Main To Chaahiay , Doona Ho Iltefaat

Sunta Nahen Hun Baat Mukarrar Kahay Baghair

GHALIB Na Kar Huzoor Men Tu Baar Baar Arz

Zaahir Hay Tera Haal Sab Un Par Kahay Baghair

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -