ہے بسکہ ہر اک ان کے اشارے میں نشاں اور

ہے بسکہ ہر اک ان کے اشارے میں نشاں اور
ہے بسکہ ہر اک ان کے اشارے میں نشاں اور

  

ہے بسکہ ہر اک ان کے اشارے میں نشاں اور

کرتے ہیں محبت تو گزرتا ہے گماں اور

یارب وہ نہ سمجھے ہیں نہ سمجھیں گے مری بات

دے اور دل ان کو جو نہ دے مجھ کو

زباں اور

ابرو سے ہے کیا اس نگہِ ناز کو پیوند

ہے تیر مقرر مگر اس کی ہے کماں اور

تم شہر میں ہو تو ہمیں کیا غم جب اٹھیں گے

لے آئیں گے بازار سے جا کر دل و جاں اور

ہر چند سبک دست ہوئے بت شکنی میں

ہم ہیں تو ابھی راہ میں ہے سنگ گراں اور

ہے خونِ جگر جوش میں دل کھول کے روتا

ہوتے جو کئی دیدۂ خوں نابہ فشاں اور

مرتا ہوں اس آواز پہ ہر چند سر اڑ جائے

جلاد کو لیکن وہ کہے جائیں کہ ہاں اور

لوگوں کو ہے خورشیدِ جہاں تاب کا دھوکا

ہر روز دکھاتا ہوں میں اک داغ نہاں اور

لیتا نہ اگر دل تمہیں دیتا کوئی دم چین

کرتا جو نہ مرتا کوئی دن آہ و فغاں اور

پاتے نہیں جب راہ تو چڑھ جاتے ہیں نالے

رکتی ہے مری طبع تو ہوتی ہے رواں اور

ہیں اور بھی دنیا میں سخن ور بہت اچھے

کہتے ہیں کہ غالبؔ کا ہے انداز بیاں اور

شاعر: مرزا غالب

Hay Bass Keh har Ik Un K Ishaaray Men Nishaan Aor

Kartay Hen MUhabbat To Guzarta Hay Gumaan Aor

Ya RAB, Wo Na Samjhay Hen , Na Samjhen Gay Miri Baat

Day Aor Dil Un Ko Jo Na Day Mujh Ko Zubaan Aor

Abru Say Hay Kia, Uss Nigh e Naaz Ko Paiwand

Hay Teer e Muqarrar , Magar Un Ki Hay Kamaan Aor

Tum Shehr Men Ho To Hamen Kia Gham, Jab Uthen Gay

Lay aaey Gay Bazaar Say Ja KAr Dil o Jaan Aor

har Chand Subak Dast Huay ButShikani Men

ham Hen To Abhi Raah Men Hay Sang e  Giraan Aor

Hay Khoon e Jigar Josh Men Dil Khol K Rota

Hotay Jo Kao Khoon Naaba Fashaan Aor

Marta Hun Uss Awaaz Pe Harchand Sar Urr Jaaey

Jallaad Ko Lekin Wo Kahay jaaey Gay Haan Aor

Logon Ko Hay Khursheed e JahaaN Taab  Ka Dhoka

har Roz Dikhaat Hun Main Ik Daagh e Nihaan Aor

Leta, Agar Dil Tumhen Deta, Koi Dam Chain

Karta Jo Na Marta Koi Din Aah  o Fughaan Aor

Paatay Nahen Jab Raah To Charrh   Jaatay Hen Naalay

Rukti Hay Miri Tabaa To Hoti Hay Rawaan Aor

Hen Aor Bhi Dunya Men Sukhanwar Bahut Achhay

Kehtay hen Keh GHALIB Ka Hay Andaaz e Bayaan Aor

Poet : Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -