لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور

لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور
لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور

  

لازم تھا کہ دیکھو مرا رستہ کوئی دِن اور

تنہا گئے کیوں؟ اب رہو تنہا کوئی دن اور

مٹ جائےگا سَر ،گر، ترا پتھر نہ گھِسے گا

ہوں در پہ ترے ناصیہ فرسا کوئی دن اور

آئے ہو کل اور آج ہی کہتے ہو کہ ’جاؤں؟‘

مانا کہ ھمیشہ نہیں اچھا کوئی دن اور

جاتے ہوئے کہتے ہو ’قیامت کو ملیں گے‘

کیا خوب! قیامت کا ہے گویا کوئی دن اور

ہاں اے فلکِ پیر! جواں تھا ابھی عارف

کیا تیرا بگڑ تا جو نہ مرتا کوئی دن اور

تم ماہِ شبِ چار دہم تھے مرے گھر کے

پھر کیوں نہ رہا گھر کا وہ نقشا کوئی دن اور

تم کون سے ایسے تھے کھرے داد و ستد کے

کرتا ملکُ الموت تقاضا کوئی دن اور

مجھ سے تمہیں نفرت سہی، نیر سے لڑائی

بچوں کا بھی دیکھا نہ تماشا کوئی دن اور

گزری نہ بہرحال یہ مدت خوش و ناخوش

کرنا تھا جواں مرگ گزارا کوئی دن اور

ناداں ہو جو کہتے ہو کہ ’کیوں جیتے ہیں غالب

قسمت میں ہے مرنے کی تمنا کوئی دن اور

شاعر: مرزا غالب

LaazimTha Keh Dekho Mira Rasta Koi Din Aor

Tanha Gaey Kiun, Ab Raho Tanha Koi Din Aor

Mitt jaaey Ga Sar , Gar Tira Pathar Na Ghisay Ga

Hun Dar Pe Tiray Naasya Farsaa Koi Din Aor

Aaey Ho Kall Aor Aaj Hi Kehtay Ho Keh Jaaun

Maana Keh Hamesha nahen, Acha, Koi Din Aor

jaatay Huay Kehtay Ho , Qayaamat Ko Milen Gay

Kia Khoob, Qayaamat Hay Goya Koi Din Aor

Haan Ay falak e Peer, Jawaan Tha abhi ARIF

Kai Tera Bigarrta , Jo Na Marta Koi Din Aor

Tum Maah e Shab e Chaar Dehm Thay Miray Ghar K

Phir Kiun Na Raha Ghar Ka Wo Naqsha Koi Din Aor

Tum Kon Say Thay Aisay Kharay Daad o Satad K

Karta Malak al  Maot Taqaaza Koi Din Aor

Mujh Say Tumhe Nafrat Sahi, Nayyar Say larraai

Bachon Ka Bhi Dekha Na Tamaasha Koi Din Aor

Guzri Na Bahar Haal Yeh Muddat Khush o Na Khush

Krna Tha Jawaan Marg Guzaara Koi Din Aor

Nadaan Ho Jo Kehtay Ho Keh Kiun Jeetay Hen GHALIB

Qismat Men Hay Marnay Ki Tamanna  Koi Din Aor

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -