زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک

زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک
زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک

  

زخم پر چھڑکیں کہاں طفلانِ بے پروا نمک

کیا مزہ ہوتا اگر پتھر میں بھی ہوتا نمک

گرد راہ یار ہے سامانِ نازِ زخمِ دل

ورنہ ہوتا ہے جہاں میں کس قدر پیدا نمک

مجھ کو ارزانی رہے تجھ کو مبارک ہو جیو

نالۂ بلبل کا درد اور خندۂ گل کا نمک

شور جولاں تھا کنارِ بحر پر کس کا کہ آج

گردِ ساحل ہے بہ زخمِ موجۂ دریا  نمک

داد دیتا ہے مرے زخم جگر کی واہ وا

یاد کرتا ہے مجھے دیکھے ہے وہ جس جا  نمک

چھوڑ کر جانا تنِ مجروح عاشق، حیف ہے

دل طلب کرتا ہے زخم اور مانگے ہیں اعضا نمک

غیر کی منت نہ کھینچوں گا پے توفیرِ درد

زخم مثل خندۂ قاتل ہے سر تا پا نمک

یاد ہیں غالبؔ تجھے وہ دن کہ وجدِ ذوق میں

زخم سے گرتا تو میں پلکوں سے چنتا تھا نمک

شاعر: مرزا غالب

Zakhm Par Chirrken Tiflaan e Beparwaah Namak

Kaya Maza Hota Agar pathar Men Bhi Hota Namak

Gard e Raah e Yaar Hay Samaan e Naaz e Zakhm e  Dil

Warna Hota Hay Jahaan Men Kiss Qadar Paid aNamak 

Mujh Ko Arzaani Rahay Tujh Ko Mubaarak Ho Jio

Naala e Bulbul Ka Dard Aor Khanda e Gull K aNamak 

Shor e Jolaan Tha Kinaar e Behr Par Kiss Ka Keh Aaj

Gard e Saahil Hay Ba Zakhm e Maoja e Darya Namak

Daad Deta Hay Miray Zakhm e Jigar Ki Wah Wa

Yaad Karta Hay Mujhay , Dekhay hay Wo Jiss Jaa Namak

Chorr Kar Jaan Tan e Majrooh  e Aashiq Haif Hay

Dil Talab Karta Hay Aor Maangay Hen Aaza Namak

Ghair Ki Minnat Na Khinchun Ga pay e Taofeer e Dard

Zakhm, Misl e Khanda e Qaati Hay Sar Ta Paa Namak

Yaad Hen GHALIB Tujahay Wo Din KEh Wajd e Zoq Men 

Zakhm Say Girta To Main Palkon Say Chunta Namak

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -