ہے کس قدر ہلاکِ فریبِ وفائے گل

ہے کس قدر ہلاکِ فریبِ وفائے گل
ہے کس قدر ہلاکِ فریبِ وفائے گل

  

ہے کس قدر ہلاکِ فریبِ وفائے گل

بلبل کے کاروبار پہ ہیں خندہ ہائے گل

آزادیِ نسیم مبارک کہ ہر طرف

ٹوٹے پڑے ہیں حلقۂ دامِ ہوائے گل

جو تھا  سو موجِ رنگ کے دھوکے میں مر گیا

اے وائے ، نالۂ لبِ خونیں نوائے گل !

خوش حال اُس حریفِ سیہ مست کا  کہ جو

رکھتا ہو مثلِ سایۂ گُل ، سر بہ پائے گل

ایجاد کرتی ہے اُسے تیرے لیے بہار

میرا رقیب ہے نفسِ عطر سائے گل

شرمندہ رکھتے ہیں مجھے بادِ بہار سے

مینائے بے شراب و  دلِ بے ہوائے گل

سطوت سے تیرے جلوۂ حسنِ غیور کی

خوں ہے مری نگاہ میں رنگِ ادائے گل

تیرے ہی جلوے کا ہے یہ دھوکا کہ آج تک

بے اختیار دوڑے ہے گل در قفائے گل

غالبؔ ! مجھے ہے اُس سے ہم آغوشی آرزو

جس کا خیال ہے گلِ جیبِ قبائے گل

شاعر: مرزا غالب

Hay Kiss Qadar halaak e fareeb e Wafa e Gull

Bulbul K Karobaar Pe Hen Khand Haa e Gull

Azaadi  e   Naseem Mubaarak Keh Har Taraf

Tootay Parray hen Halqa e Daam e Hawaa e Gull

Jo Tha So Moj e Rang K Dhokay Men mar Gaya

Ay Wa e Naala e lab e Khoonen Nawa e Gull

Khush Haal Uss hareef  e Siaa Mast Ka Keh Jo

Rakhta Ho Misl e Saaya e Gull Sar ba Paa e  Gull

Ejaad Karti Hay Ay Teray Liay Bhaar

Mera Raqeeb Hay Nafas e Etr Saa e Gull

Sharminda Rakhtay Hen Mujhay  Baad e Bahaar Say

Meena e Be Sharab o Dil e Be Hawaa e Gull

Satwat Say Teray Jalwa e Husn e Gayyoor Ki 

Khoon Hay Miri Nigaah Men rang Adaa e Gull

Teray Hi Jalway Ka Hay Yeh Dhoka Keh Aaj Tak

Bay Ikhtayaar Dorray hay Gull Aor Qafaa e Gull

GHALIB MujahY hay Uss Say Ham Aaghoshi Aarzu

Jiss Ka Khayaal Hay Gul jaib Qubaa e Gull

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -