وہ فراق اور وہ وصال کہاں

وہ فراق اور وہ وصال کہاں
وہ فراق اور وہ وصال کہاں

  

وہ فراق اور وہ وصال کہاں

وہ شب و روز و ماہ و سال کہاں

فرصتِ کاروبارِ شوق کسے

ذوقِ نظارۂ جمال کہاں

دل تو دل وہ دماغ بھی نہ رہا

شورِ سودائے خطّ و خال کہاں

تھی وہ اک شخص کے تصّور سے

اب وہ رعنائیِ خیال کہاں

ایسا آساں نہیں لہو رونا

دل میں‌طاقت، جگر میں حال کہاں

ہم سے چھوٹا قمار خانۂ عشق

واں جو جاویں، گرہ میں مال کہاں

فکرِ دنیا میں سر کھپاتا ہوں

میں کہاں اور یہ وبال کہاں

مضمحل ہو گئے قویٰ غالبؔ

وہ عناصر میں اعتدال کہاں

شاعر: مرزا غالب

Wo Firaaq Aor Wo Visaal Kahan

Wo Shab o Roz Mah o Saal Kahan

Fursat e Karobaa e Shoq Kisay

Zoq e Nazaara e Jamaal Kahan

Dil To Dil, Wo Dimaagh Bhi Na Raha

Shor e Soda e Khat o Khaal Kahan

Thi Wo Ik Shakh   K Taswwar Say

Ab Eo ranaai e Khayaal kahan

Aisa Asaan Nahen Lahu Rona

Dil Men Taaqat , Jigar Men Haal Kahan

Ham Chhoota Kumaar Khaana e Eshq

Waan Jo Jaawen , Girah Men Maal kahan

Fikr e Dunya Men Sar khapaata Hun

Main Kahan Aor Yeh Wabaal Kahan

Muzmahil Ho Gaey Qawa GHALIB

Wo Anaasar Men Aitadaal kahan

Poet: Miraz  Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -