ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں

ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں
ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں

  

ہم پر جفا سے ترکِ وفا کا گماں نہیں

اِک چھیڑ ہے وگرنہ مراد امتحاں نہیں

کس منہ سے شکر کیجئے اس لطفِ خاص کا

پرسش ہے اور پائے سخن درمیاں نہیں

ہم کو ستم عزیز، ستم گر کو ہم عزیز

نا مہرباں نہیں ہے اگر مہرباں نہیں

بوسہ نہیں، نہ دیجیے دشنام ہی سہی

آخر زباں تو رکھتے ہو تم، گر دہاں نہیں

ہر چند جاں گدازیِ قہر و عتاب ہے

ہر چند پشت گرمیِ تاب و تواں نہیں

جاں مطربِ ترانہ ھَل مِن مَزِید ہے

لب پردہ سنجِ زمزمۂِ الاَماں نہیں

خنجر سے چیر سینہ اگر دل نہ ہو دو نیم

دل میں چُھری چبھو مژہ گر خونچکاں نہیں

ہے ننگِ سینہ دل اگر آتش کدہ نہ ہو

ہے عارِ دل نفس اگر آذر فشاں نہیں

نقصاں نہیں جنوں میں بلا سے ہو گھر خراب

سو گز زمیں کے بدلے بیاباں گراں نہیں

کہتے ہو “ کیا لکھا ہے تری سرنوشت میں“

گویا جبیں پہ سجدۂ بت کا نشاں نہیں

پاتا ہوں اس سے داد کچھ اپنے کلام کی

رُوح القُدُس اگرچہ مرا ہم زباں نہیں

جاں ہے بہائے بوسہ ولے کیوں کہے ابھی

غالبؔ کو جانتا ہے کہ وہ نیم جاں‌ نہیں

شاعر: مرزا غالب

Ham Par Jafa Say , Tark e Wafa  Ka Gumaan Nahen

Ik Chhairr Hay Wagarna Muraad Imtehaan Nahen

Kiss Munh Say Shukr Kijiay Uss  Lutf e Khaas Ka 

Pursish Hay , Darya e Sukhan Darmyaan Nahen

Ham Ko Sitam Aziz , Sitam Gar Ko Ham Aziz

Na Mehrbaan Nahen Hay,Agar Mehrbaan Nahen

Bosa Nahen, Na Dijiay, Dushnaam Hi Sahi

Aakhir Zubaan To Rakhtay Ho Tum , Gar Dahaan Nahen

Harchand Jaangudaazi e Qehr o Utaab Say

harchand Pusht garmi e Taab o Tawaan Nahen

Jaan, Matrib e Taraana Hall Min Mazeed Hay

Lab ,Parda e Sanj e Zamzama e Al Amaan Nahen

Kahnjar Say Cheer Seena , gar Dil Na Ho Do Neem

Dil Men Churi Chibho , Mazza Gar Khoon Chakaan Nahen

Hay Nang e Seena e Dil , Agar Aatish Kadaa Na Ho

Hay Aar e Dil Nafas Agar Fashaan Nahen

Nuqsaan Nahen Junoon Men Balaa Say Ho Ghar Kharaab

Sao Gazz Zameen K Badlay Bayabaan Giraan Nahen

Kehtay Ho Kia Likha Hay Tiri Sarnavasht Men

Goya  Jabeen Pe Sajdaa e Butt Ka Nishaan Nahen

Paata Hun Uss Say Daad Kuch Apnay kalaam Ki

Ruh ol Qadas Agarcheh Mira Ham Zubaan Nahen

JaaN hay Bhaa e Bosa ,Walay Kiun Kahay, Abhi

GHALIB  Ko Jaanta Hay Keh Wo Neem Jaan Nahen

Poet: Mirza  Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -