ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں 

ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں 
ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں 

  

مانعِ دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں 

ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں 

شوق اس دشت میں دوڑائے ہے مجھ کو،کہ جہاں 

جادہ غیر از نگہِ دیدۂ تصویر نہیں 

حسرتِ لذّتِ آزار رہی جاتی ہے 

جادۂ راہِ وفا جز دمِ شمشیر نہیں 

رنجِ نو میدیِ جاوید گوارا رہیو 

خوش ہوں گر نالہ زبونی کشِ تاثیر نہیں 

سر کھجاتا ہے جہاں زخمِ سر اچھا ہو جائے 

لذّتِ سنگ بہ اندازۂ تقریر نہیں 

جب کرم رخصتِ بیباکی و گستاخی دے 

کوئی تقصیر بجُز خجلتِ تقصیر نہیں 

غالبؔ اپنا یہ عقیدہ ہے بقولِ ناسخ 

آپ بے بہرہ ہے جو معتقدِ میر نہیں

شاعر: مرزا غالب

maanay Dasht Nawardi Koi Tacbeer Nahen

Aik Chakkar hay Miray Paaon Men Zanjeer Nahen

Shoq Uss Dasht Men Doraaaey Hay Mujh Ko Keh Jahaan

Jaaada Ghair Az Niga Deeda e Tasveer   Nahen

Hasrat e Lazzat e Aazaar Rahi Jaati Hay

Jaada e Raah e Wafa Juz Dam e Shamsheer Nahen

Ranj Nomeedi e Javed Gawaara Rahio

Khush Hun, gar Naala Zabooni Kashe Taseer Nahen

Sar Khujaata Hay Jahaan  Zakhm e Sar Acha Ho Jaaey

Lazzat e Sang Ba Anadaaza e Taqreer  Nahen

Jab Karam Rukhsat e Bay Baaki o Gustaakhi Day

Koi Taqseer Bajuz Khijlat e Taqseer Nahen

GHALIB Apna Yeh Aqeeda hay Ba Qol e NASIKH

Aap Be Behra Hay Jo Motaqd e MEER Nahen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -