عشق تاثیر سے نومید نہیں

عشق تاثیر سے نومید نہیں
عشق تاثیر سے نومید نہیں

  

عشق تاثیر سے نومید نہیں

جاں سپاری شجر  بید نہیں

سلطنت دست بدست آئی ہے

جام مے خاتم جمشید نہیں

ہے تجلی تری سامان وجود

ذرہ بے پرتو خورشید نہیں

راز معشوق نہ رسوا ہو جائے

ورنہ مر جانے میں کچھ بھید نہیں

گردش رنگ طرب سے ڈر ہے

غم محرومیِ جاوید نہیں

کہتے ہیں جیتے ہیں امید پہ لوگ

ہم کو جینے کی بھی امید نہیں

شاعر: مرزا غالب

Eshq Taseer Say Naomeed Nahen

jaan Sapaari Shajar Baid Nahen

Saltanat Dast ba Dast Aai Hay

Jaam e May, Khaatam Jamshed Nahen

hay Tajalli Tiri Samaan e Wajood

Zara bay Partav e Khurshed  Nahen

Raaz e Mashooq Na Ruswa Ho Jaaey

Warna Mar Jaanay Men Kuch Bhaid Nahen

Gardash e Rang Tarab Men Say Dar Hay

Ghame Mehroomi e Javed Nahen

Kehtay Hen Jeetay Hen Umeed Pe Log

Ham Ko Jeenay Ki Bhi Umeed Nahen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -