جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں

جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں
جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں

  

جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں

خیاباں خیاباں ارم دیکھتے ہیں

دل آشفتگاں خالِ کنجِ دہن کے

سویدا میں سیرِ عدم دیکھتے ہیں

ترے سروِ قامت سےاک  قدِّ آدم

قیامت کے فتنے کو کم دیکھتے ہیں

تماشا کہ اے محوِ آئینہ داری

تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں

سراغِ تفِ نالہ لے داغِ دل سے

کہ شب رو کا نقشِ قدم دیکھتے ہیں

بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالب

تماشاۓ اہلِ کرم دیکھتے ہیں

شاعر: مرزا غالب

Jahaan Tera Naqsh e Qadam Dekhtay Hen

Khayabaan khyabaan  Iram Dekhtay Hen

Dil Aashuftgaan  Khaal e Kunj e Dahan K 

Sawaida Men Sair e Adam Dekhtay Hen

Tiray Sarv Qaamat Say Ik Qad e Aadam

Qayaamay Kay Fitnay  Ko Ham Dekhtay Hen

Tamaasha Keh Ay Mehv e Aaina Daari

Tujhay kiss tamanna Say Ham Dekhtay Hen

Suraagh e taff e Naala lay Daagh e Dil Say

Keh karb Ro Ka  naqsh e Qadam Dekhtay Hen

Bana Kar Faqeeron Ka Ham Bhais  GHALIB

Tamaash e Ehl e Karam Dekhtay Hen

Poet; Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -