کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عذاب میں

کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عذاب میں
کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عذاب میں

  

ملتی ہے خوئے یار سے نار التہاب میں

کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عذاب میں

کب سے ہوں کیا بتاؤں جہانِ خراب میں

شب ہائے ہجر کو بھی رکھوں گر حساب میں

تا پھر نہ انتظار میں نیند آئے عمر بھر

آنے کا عہد کر گئے آئے جو خواب میں

قاصد کے آتے آتے خط اک اور لکھ رکھوں

میں جانتا ہوں جو وہ لکھیں گے جواب میں

مجھ تک کب ان کی بزم میں آتا تھا دور جام

ساقی نے کچھ ملا نہ دیا ہو شراب میں

جو منکرِ وفا ہو فریب اس پہ کیا چلے

کیوں بد گماں ہوں دوست سے دشمن کے باب میں

میں مضطرب ہوں وصل میں خوفِ رقیب سے

ڈالا ہے تم کو وہم نے کس پیچ و تاب میں

میں اور حظِ وصل خدا ساز بات ہے

جاں نذر دینی بھول گیا اضطراب میں

ہے تیوری چڑھی ہوئی اندر نقاب کے

ہے اک شکن پڑی ہوئی طرفِ نقاب میں

لاکھوں لگاؤ ایک چرانا نگاہ کا

لاکھوں بناؤ ایک بگڑنا عتاب میں

وہ نالہ دل میں خس کے برابر جگہ نہ پائے

جس نالہ سے شگاف پڑے آفتاب میں

وہ سحر مدعا طلبی میں نہ کام آئے

جس سحر سے سفینہ رواں ہو سراب میں

غالب، چھٹی شراب ، پر اب بھی کبھی کبھی

پیتا ہوں روز  ابرِ  و شبِ ماہتاب میں

شاعر: مرزا غالب

Milti Hay Khoo e Yaar Say Naar Eltehaab Men

Kaafir  Hun  Gar Na Milti Ho Ho Raahat Azaab Men

Kab Say Hun, Kaya bataaun , Jahaan e Kharaab Men

Shab Haa e Hijr Ko Bhi Rakhun Gar Hiassab Men

Taa Phir Na Intezaar  Men Neend Aaey Umr Bhar

Aanay Ka Ehd Kar Gaey , Aaey Jo Khaab Men

Qaasid K Aatay Aatay Khat Ik Aor Likh Rakhon

Main Jaantaa Hun Jo Wo Likhebn Gay Jawaab Men

Mujh Tak kab Un Ki bazm Men Aata hay Daor e Jaam

Saaqi Nay Kuch Mila na Dia Ho Sharaab Men

Jo Mukir e Wafa Ho Fasraib Uss Pe Kaya Chalay

Kiun Badgumaan Hun Dost Say Dushman k Baab Men

MaiN Muztarb Hun Wasl Men Khaof e Raqeeb Say

Daala hay Tum Ko Wehm Nay Kiss Paich o Taab Men

maiN aor hazz e Wasl , Khuda Saaz Baat Hay

Jaan Nazr Daini Bhool Gia Iztaraab Men

Hay Taivri Charrhi Hui Andar Naqaab K

Hay ik Shikan Parri Hui Tarf e Naqaab Men

Laakhon Lagaao , Aik Churaana Nigaah ka

Laakhon Bnaao ,Aik Bigarrna Utaab Men

Wo Naal, Dil Men Khass K Baraabar Jagah Na Paaey

Jiss Naalay Shagaaf Parray Aaftaab Men

Wo Sahar , Mudaa Talabi Men Na Kaam Aaey

Jiss Sahar Say Safeena Rawaan Ho Saraab Men

GHALIB Chhutti Sharaab , par Ab Bhi Kabhi Kabhi

Peeta Hun Roz e Abr o Shab e mahtaab Men

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -