حیراں ہوں دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں

حیراں ہوں دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں
حیراں ہوں دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں

  

حیراں ہوں دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں

مقدور ہو تو ساتھ رکھوں نوحہ گر کو میں

چھوڑا نہ رشک نے کہ ترے گھر کا نام لوں

ہر اک سے پوچھتا ہوں کہ جاؤں کدھر کو میں

جانا پڑا رقیب کے در پر ہزار بار

اے کاش جانتا نہ ترے رہگزر کو میں

ہے کیا جو کس کے باندھئے میری بلا ڈرے

کیا جانتا نہیں ہوں تمہاری کمر کو میں

لو وہ بھی کہتے ہیں کہ یہ بے ننگ و نام ہے

یہ جانتا اگر تو لٹاتا نہ گھر کو میں

چلتا ہوں تھوڑی دور ہر اک تیز رو کے ساتھ

پہچانتا نہیں ہوں ابھی راہ بر کو میں

خواہش کو احمقوں نے پرستش دیا قرار

کیا پوجتا ہوں اس بت بیداد گر کو میں

پھر بے خودی میں بھول گیا راہِ کوئے یار

جاتا وگرنہ ایک دن اپنی خبر کو میں

اپنے پہ کر رہا ہوں قیاس اہل دہر کا

سمجھا ہوں دل پذیر متاع ہنر کو میں

غالبؔ خدا کرے کہ سوار سمندِ ناز

دیکھوں علی بہادرِ عالی گہر کو میں

شاعر: مرزا غالب

Hairaan Hun , Dil Ko Roun Keh Peetun Jigar Ko main

Maqdoor Ho To Saath Rakhun Nohagar Ko Main

Chorra Na Rashq Nay Keh Tiray Ghar Ka Naam Lun

Har Aik Say Poochta Hun Keh Jaaun Kidhar Ko Main

Jaana Parra Raqeeb K Ghar Par Hazaar Baar

Ay  Kaash Jaanta Na Tiri Rehguzar Ko Main

Hay Kaya Jo Kass K Baandhiay, Meri Balaa Daray

Kaya Jaanta Nahen Hun Tumhaari Kamar Ko Main

Lo Wo Bhi Kehtay hen Keh Ye be Nang o Naam Hay

Yeh Jaanta Agar To Lutaata Na  Ghar Ko Main

Chalta Hun Thorri Door Har Ik Taiz Ro K Saath

Pehchaanta Nahen Hun Abhi Raahbar Ko Main

Khaahish Ko Ahmakon Nay Parastish Dia Qaraar 

Kaya Poojta Hun Uss  Butt e Bedaad Gar Ko Main

Phir Bekhudi Men Bhool Gaya Raah e Koo e Yaar 

Jaata Wagarna Aik Din Apni Khabar Ko Main

Apnay Pe Kar Raha Hun Qayaas Ehl e Dehr Ka

Samjha Hun Dilpazeer , Mohtaaj e Hunar Ko Main

GHALIB Khuda Karay Keh Sawaar e Samand e Naaz 

Dekhun ALI BAHADUR Aali Gohar Ko Main

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -