ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں

ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں
ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں

  

ذکر میرا بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں

غیر کی بات بگڑ جائے تو کچھ دُور نہیں

وعدۂِ سیرِ گلستاں ہے، خوشا طالعِ شوق

مژدۂ قتل مقدّر ہے جو مذکور نہیں

شاہدِ ہستیِ مطلق کی کمر ہے عالَم

لوگ کہتے ہیں کہ ’ ہے‘ پر ہمیں‌منظور نہیں

قطرہ اپنا بھی حقیقت میں ہے دریا لیکن

ہم کو تقلیدِ تُنک ظرفیِ منصور نہیں

حسرت! اے ذوقِ خرابی، کہ وہ طاقت نہ رہی

عشقِ پُر عربَدہ کی گوں تنِ رنجور نہیں

میں جو کہتا ہوں کہ ہم لیں گے قیامت میں تمھیں

کس رعونت سے وہ کہتے ہیں کہ “ ہم حور نہیں“

ظلم کر ظلم! اگر لطف دریغ آتا ہو

تو  تغافل میں‌کسی رنگ سے معذور نہیں

صاف دُردی کشِ پیمانۂ جم ہیں ہم لوگ

وائے! وہ بادہ کہ افشردۂ انگور نہیں

پیٹھ محراب کی قبلے کی طرف رہتی ہے

محوِ نسبت ہیں، تکلّف ہمیں منظور نہیں

ہُوں ظہوری کے مقابل میں خفائی غالبؔ

میرے دعوے پہ یہ حجت ہےکہ مشہور نہیں

شاعر: مرزا غالب

Zikr Mera Ba Badi Bhi Usay Manzoor Nahen

Ghair Ki Baat Bigarr Jaaey To Kuch Door Nahen

Wada e Sair e Gulistaan Hay ,Khosha taalay Shoq

Muzzda e Qatl Muqaddar  hay Jo Mazkoor Nahen

Shahid e Masti e Mutliq Ki Kamar Hay Aalam

Log Kehtay Hen Keh Hay,PAr Hamen Manzoor Nahen

Qatra Apna Bhi Haqeeqat Men Hay Darya Lekin

Ham Ko Taqleed e Tunaq Zarfi e Mansoor Nahen

Hasrat, Ay Zoq e Kharaabi Keh Wo Taaqat Na Rahi

Eshq par Arbada Ki Goon Tan e Ranjoor Nahen

Main Jo Kehta Hun Keh Ham Len Gay Qayamat Men Tumhen

Kiss Raoonat Say Wo Kehtay Hen Keh Ham Hoor Nahen

Zulm Kar Zulm , Agar Lutf e Daraigh Aata Ho

Tu Taghaafull Men Kisi Rang  Say Mazoor Nahen

Saaf Durdi Kashe Paimaana e Jam Hen Ham Log

Waaey Wo Bada Keh Afshard e Angoor Nahen

Hun Zahoori K Muqaabil Men Khafaai GHALIB

Meray Daaway Pe Yeh Hujjat Hay Keh Mashhoor Nahen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -