تیرے توسن کو صبا باندھتے ہیں

تیرے توسن کو صبا باندھتے ہیں
تیرے توسن کو صبا باندھتے ہیں

  

تیرے توسن کو صبا باندھتے ہیں

ہم بھی مضموں کی ہَوا باندھتے ہیں

آہ کا کس نے اثر دیکھا ہے

ہم بھی اک اپنی ہوا باندھتے ہیں

تیری فرصت کے مقابل اے عمر!

برق کو پابہ حنا باندھتے ہیں

قیدِ ہستی سے رہائی معلوم!

اشک کو بے سروپا باندھتے ہیں

نشۂ رنگ سے ہے واشُدِ گل

مست کب بندِ قبا باندھتے ہیں

غلطی ہائے مضامیں مت پُوچھ

لوگ نالے کو رسا باندھتے ہیں

اہلِ تدبیر کی واماندگیاں

آبلوں پر بھی حنا باندھتے ہیں

سادہ پُرکار ہیں خوباں غالبؔ

ہم سے پیمانِ وفا باندھتے ہیں

شاعر: مرزا غالب

Teray Tosam Ko Sabaa Baandhtay Hen

Ham Bhi Mazmoon Ki Hawaa Baandhtay Hen

Aah Ka Kiss Nay Asar Dekha Hay

Ham Bhi Apni Ik Hawaa Baandhtay Hen

Teri Fursat K Muqabil Ay Umr

Barq Ko Pa Ba Hinaa Baandhtay Hen

Qaid e Hasti Say Rihaai Maloom

Ashq Ko Be Saropaa Baandhtay Hen

Nashha e Rang Say Hay Washud e Gull

Mast Kab Band e Qubaa Baandhtay Hen

Ghalti haa e Mazameen Mat Pooch

Loq Naalay Ko Rasaa Baandhtay Hen

Ehl e Tadbeer Ki Wa Maandgiaan

Aablon Par Bhi Hinaa Baandhtay Hen

Saada o Purkaar Hen Khubaan GHALIB

Ham Say Paimaan e Wafaa Baandhtay Hen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -