دائم پڑا ہوا ترے در پر نہیں ہوں میں

دائم پڑا ہوا ترے در پر نہیں ہوں میں
دائم پڑا ہوا ترے در پر نہیں ہوں میں

  

دائم پڑا ہوا ترے در پر نہیں ہوں میں

خاک ایسی زندگی پہ کہ پتھر نہیں ہوں میں

کیوں گردش مدام سے گھبرا نہ جاے دل

انسان ہوں پیالہ و ساغر نہیں ہوں میں

یارب زمانہ مجھ کو مٹاتا ہے کس لیے

لوح جہاں پہ حرف مکرر نہیں ہوں میں

حد چاہیے سزا میں عقوبت کے واسطے

آخر گناہ گار ہوں کافر نہیں ہوں میں

کس واسطے عزیز نہیں جانتے مجھے

لعل و زمرد و زر و گوہر نہیں ہوں میں

رکھتے ہو تم قدم مری آنکھوں سے کیوں دریغ

رتبے میں مہر و ماہ سے کم تر نہیں ہوں میں

کرتے ہو مجھ کو منع قدم بوس کس لیے

کیا آسمان کے بھی برابر نہیں ہوں میں

غالبؔ وظیفہ خوار ہو دو شاہ کو دعا

وہ دن گئے کہ کہتے تھے نوکر نہیں ہوں میں

شاعر: مرزا غالب

Daaim Parra Pua Tiray Dar Par Nahen Hun Main

Khaak Aisi Zidgai Pe Keh Pathar Nahen Hun Main

Kiun Gardash e Madaam Say Ghabara  Na Jaaey Dil

Insaan Hun Payaala o Saghar Nahen Hun Main

Ya RAB Zamaana Mujh Ko Mitaata Hay Kiss Liay

Laoh e Jaan Pe Harf  e Mukarrar Nahen Hun Main

Had Chaahiay Saza Men Aqoobat K Waastay

Aakhir GunaahGar Hun , Kaafir Nahen Hun Main

Kiss Waastay Aziz  Nahen JjaantayMujhay

Laal o Zamurrud o Zard Gohar Nahen Hun Main

Rakhtay Ho Tum Qadam Miri Aankhon Say Kiun darigh

Rutbay Men Mehr o Maah Say Kamtar Nahen Hun Main

kartay Ho Mujh Ko mana e Qadam Bos Kiss Liay

Kaya Aasmaan K Bhi Baraabar Nahen Hun Main

GHALIB Wazeefa Khaar Hun Do Shaah Ko Dua

Wo Din Gaeuy Jo Kehtay Thay Nokar Nahen Hun Main

Poet: Mirza Gahlib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -