سب کہاں؟ کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں

سب کہاں؟ کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں
سب کہاں؟ کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں

  

سب کہاں؟ کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں

خاک میں کیا صورتیں ہوں گی کہ پنہاں ہو گئیں!

یاد تھیں ہم کو بھی رنگارنگ بزم آرائیاں

لیکن اب نقش و نگارِ طاقِ نسیاں ہو گئیں

تھیں بنات النعشِ گردوں دن کو پردے میں نہاں

شب کو ان کے جی میں کیا آئی کہ عریاں ہو گئیں

قید میں یعقوب نے لی گو نہ یوسف کی خبر

لیکن آنکھیں روزنِ دیوارِ زنداں ہو گئیں

سب رقیبوں سے ہوں ناخوش، پر زنانِ مصر سے

ہے زلیخا خوش کہ محوِ ماہِ کنعاں ہو گئیں

جُوئے خوں آنکھوں سے بہنے دو کہ ہے شامِ فراق

میں یہ سمجھوں گا کہ شمعیں دو فروزاں ہو گئیں

ان پری زادوں سے لیں گے خلد میں ہم انتقام

قدرتِ حق سے یہی حوریں اگر واں ہو گئیں

نیند اُس کی ہے، دماغ اُس کا ہے، راتیں اُس کی ہیں

تیری زلفیں جس کے بازو پر پریشاں ہو گئیں

میں چمن میں کیا گیا گویا دبستاں کُھل گیا

بلبلیں سن کر مرے نالے غزل خواں ہو گئیں

وہ نگاہیں کیوں ہُوئی جاتی ہیں یارب دل کے پار؟

جو مری کوتاہیِ قسمت سے مژگاں ہو گئیں

بس کہ روکا میں نے اور سینے میں اُبھریں پَے بہ پَے

میری آہیں بخیئہ چاکِ گریباں ہو گئیں

واں گیا بھی میں تو ان کی گالیوں کا کیاجواب؟

یاد تھیں جتنی دعائیں صرفِ درباں ہو گئیں

جاں فزا ہے بادہ جس کے ہاتھ میں جام آ گیا

سب لکیریں ہاتھ کی گویا، رگِ جاں ہو گئیں

ہم موحد ہیں ہمارا کیش ہے ترکِ رسوم

ملتیں جب مٹ گئیں اجزائے ایماں ہو گئیں

رنج سے خوگر ہوا انساں تو مٹ جاتا ہے رنج

مشکلیں مجھ پر پڑیں اتنی کہ آساں ہو گئیں

یوں ہی گر روتا رہا غالبؔ تو اے اہل جہاں

دیکھنا ان بستیوں کو تم کہ ویراں ہو گہیں

 شاعر: مرزا غالب

Sab Kahaan Laala o Gull Men Numaayaan Ho Gaen

Khaak Men Kaya Soorten Hon Gi Keh Pinhaan Ho Gaen

Yaad Then Ham Ko Bhi , Ranga Rang Bazm Aaraayaan

Lekin Ab Naqsh o Nigaar e Taaq e Nisyaan Ho Gaen

Then Binaat un Naash Gardun , Din Ko Parday Nen Nihaan

Shab Ko Un K Ji Men Kaay Aai Keh Uryaan Ho Gaen

Qaid Men YAQOOB NAy Li Go Na YOUSAF Ki Khabar

Lekin Aankhen Rozan e Dewaar e Zindaan Ho Gaen

Sab Raqeebon Say Hun Na Khush, Par Zanaan e Misr Say

Hay ZULAIKHA Khush Keh Mehv e Mah e Kinaan Ho Gaen

Joo e Khoon Aamkhon Say Behnay Do Keh Hay Shaame Firaaq

Main Yeh Samjhun Ga Keh Shamen Do Firozaan Ho Gaen 

In Pari  Zaadon Say Len Gay Khuld Men Ham Inteqaam

Qudrat e Haq Say yahi Hooren Agar Waan Ho Gaen

Neend Uss Ki Hay, Dimaaagh Uss Ka Hay,Raaten Uss Ki Hen

Teri Zulfen Jiss K Baazu Par Pareshaan Ho gaen

Main Chaman Men Kaya Gaya, Goya Dabistaan Khull Gaya

Bulbulen Sun Kar  Miray Naalay  Ghazal Khaan HoGaen

Wo Nigaahen Kiun Hui Jaati Hen Ya RAB Dil K Paar

Jo Miri Kotaahi e Qismat Say Mizzgaan Ho Gaen

Basskeh Roka Main Nay Aor Seenay Men Ubhren Pay Dar Pay

Meri Aahen Bakhia e Chaak e Geraibaan Ho Gaen

Waan Gaya Bhi Main To Un Ki Gaalion Ka Kaya Jawaab

Yaad Then Jitni Duaen Sarf  e Darbaan Ho Gaen

Jaan Fiza Hay baada Jiss K haath Men Jaam Aa Gia

Sab Lakeeren Haath Ki Goya rag e Jaan Ho Gaen

Ham Muwahhhid Hen Hamaara Kaish hay tark e Rasoom

Millten Jab Mitt Gaen , Ajzaa e Emaan Ho Gaen

ranj Say Khugar Hua Insaan, To Mitt Jaata Hay Ranj

Mushkalen Mujh Par Parren Itni Keh Aasaan Ho Gaen

Yun Hi Agar Rota Rah GHALIB To Ay Ehl e  Jahaan 

Dekhna In Bastion Ko Tum Ko Keh Weraan Ho Gaen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -