امریکہ مذاکرات میں ناکامی کی صورت میں ایران پر حملے کیلئے تیار تھا ،وال سٹریٹ جرنل

امریکہ مذاکرات میں ناکامی کی صورت میں ایران پر حملے کیلئے تیار تھا ،وال ...

 واشنگٹن( مانیٹرنگ ڈیسک ،اے این این)موقرامریکی اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ ایرانی جوہر ی پروگرام پر معاہدے میں ناکامی پر امریکہ ایرانی جوہری تنصیبات کو تباہ کرنے کیلئے تیار تھا، امریکا نے ایرانی تنصیبات کو تباہ کرنے کیلئے بنکر بسٹر کو اپ گریڈ کیا ،وسط جنوری میں بی ٹو بمبار کے ذریعے اپ گریڈ بنکر بسٹر بموں کو نامعلوم مقام پر گرا کر ان کے تجربات کیے،سفارت کاری کی ناکامی کی صورت میں وائٹ ہاوس ملٹری کارروائی کا فیصلہ کیاجاتا، پینٹا گان کے ترجمان نے رپورٹ پر بات کرنے سے انکار کر دی ا۔ امریکی اخبار’’وال سٹریٹ جرنل‘‘ کی رپورٹ میں ایک سینئر امریکی اہلکار کے حوالے سے کہا گیا کہ پینٹا گان مسلسل ایران کے خلاف ملٹری آپشن پر توجہ مرکوز کیے ہوئے تھا ۔صدر باراک اوباما نے تسلیم کیا کہ اگر سفارت کاری ناکام ہوتی تو ملٹری آپشن موجود تھا۔ اب امریکا کا سب سے زیادہ تباہ کن روایتی ہتھیاربنکر بسٹر بم ایم او پی ایرانی اور شمالی کوریا کی جوہری تنصیبات کو تباہ کرنے کے قابل ہے۔رپورٹ کے مطابق پینٹا گان نے امریکی ہتھیاروں میں سب سے بڑے بنکر بسٹر بم کو اپ گریڈ کرکے اس کے تجربات کئے۔ان کو اپ گریڈ کرنے کا مقصد ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کی ناکامی میں امریکا ایران کے سب سے بھاری جوہری تنصیبات کو غیر فعال یا تباہ کرنا تھا، یہاں تک کہ اوباما انتظامیہ جب ایران کے ایٹمی پروگرام کو قابو کرنے کیلئے ایران کے ساتھ سفارتی معاہدے کی کوششیں کر رہی تھی ، اس وقت پینٹا گان اپنے سب سے زیادہ تباہ کن روایتی ہتھیاروں میں سے ایک کی بہتری پر توجہ دے رہا تھا ، ان میں وہ الیکٹرانک اقدامات بھی تھے جن سے بم کے گائڈنگ نظام کو جام کرنے سے سے روکنا تھا ایران کے ساتھ مذاکرات کے حالیہ دور کے آغاز سے پہلے ہی بنکر بسٹر پر کام شروع کردیا گیا تھا اور جنوری کے درمیان میں اس پر تجربہ کیا گیا۔بی ٹو بمبار نے میسوری کے مقام پر وائٹ مین ائیرفورس بیس سے پرواز کی تھی اور اپ گریڈ بنکر بسٹر کو ایک نامعلوم امریکی مقام پر گرایا ۔ایران کے ساتھ امریکا اور دیگر عالمی طاقتیں ایک معاہدے پر پہنچی جس کے تحت ایران جوہری ہتھیار نہیں بنائے گا۔ایران نے جوہری ہتھیاروں کی منصوبہ بندی سے انکار کیا۔ عارضی معاہدے کو سراہتے ہوئے امریکی حکام نے کہا کہ حتمی معاہدے کی شرائط ابھی غیر واضح ہے ۔حکام کا کہنا ہے کہ زیادہ تر خلیج تکنیکی تفصیلات کے ساتھ ساتھ نفاذ پر رہی اور یہ واضح نہیں کہ امریکی کانگریس وائٹ ہاؤس کی شرائط کو قانون سازی میں منتقل کرے گی۔اوباما نے ایران کے ساتھ اس معاہدے کو مشرق وسطی میں ایک اور جنگ سے بچنے کا بہترین طریقہ قرار دیا۔ہتھیاروں کے تجربات کی تفصیلات ان امریکی حکام نے فراہم کی جو اوباما انتظامیہ کی ایران کے ساتھ سفارتکاری میں شامل نہیں تھے۔

پینٹاگون کے ترجمان کرنل اسٹیو وارن نے کہا کہ امریکی فوج کسی بھی وسیع ممکنہ خطرے کیلئے تیار رہتی ہے۔اخبار نے 2012میں ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ پینٹا گان کے جنگی منصوبہ ساز اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ 30ہزار پونڈ کا بنکر بسٹر اتنا طاقتور نہیں کہ ایرانی جوہری تنصیبات کو تباہ کرسکے۔2013میں اخبارنے رپورٹ کیا تھاکہ ہتھیار وں کودوبارہ ڈیزائن کیا جا رہا ہے۔ حالیہ مہینوں میں جب ان کے تجربات کیے گئے تو یہ ہتھیاراس قابل ہیں کہ ایرانی یا شمالی کوریا کی جوہری تنصیبات کو تباہ کرسکتے ہیں۔

مزید : علاقائی