پاناما لیکس دستاویزات ایک برس قبل ملنا شرع ہوئے، ذریعے نے مالی فائدے کا نہیں تحفظ کا مطالبہ کیا: جرمن اخبار

پاناما لیکس دستاویزات ایک برس قبل ملنا شرع ہوئے، ذریعے نے مالی فائدے کا نہیں ...
پاناما لیکس دستاویزات ایک برس قبل ملنا شرع ہوئے، ذریعے نے مالی فائدے کا نہیں تحفظ کا مطالبہ کیا: جرمن اخبار

  


لاہور (ویب ڈیسک) جرمن اخبار کا دعویٰ ہے کہ اسے پاناما لیکس کے دستاویزات ایک برس قبل ملنا شروع ہوئے، جس ذریعے نے موزاک فونسیکا نامی لاءفرم کے دستاویزات دئیے اس نے مالی فائدے کا نہیں تحفظ کا مطالبہ کیا تھا۔ اخبار روزنامہ جنگ کے مطابق پاناما لیکس افشا کرنے والے معروف جرمن اخبا رزیتوشے زائتونگ (Zuddeutshe-Zeitung) کا دعویٰ ہے کہ ایک برس قبل اسے ایک نامعلوم ذریعے سے موزاک فونسیکا کے دستاویزات ملنا شروع ہوئے اور مسلسل ان دستاویزات کی آمد کا سلسلہ جاری رہا۔ یاد رہے کہ انٹرنیشنل کنسورشیم آف انوسٹی گیٹو جرنلسٹ (آئی سی آئی جے) نے جرمن اخبار کے دعوﺅں کی تردید نہیں کی۔ 1945ءمیں قائم ہونے والے اس اخبار کی اشاعت 2012ءمیں 4 لاکھ 32 ہزار تھی۔ پاناما لیکس صحافتی تاریخ میں سب سے بڑا سکینڈل ہے اور اتنی زیادہ تعداد میں تحقیقاتی صحافیوں کو کبھی انکشافات دستیاب نہیں ہوئے۔ جرمن اخبار کا کہنا ہے کہ 2.6 ٹیراپائٹ پر مبنی دستاویزات فراہم کرنے والے ذریعے نے ماسوائے تحفظ کیلئے چند اقدامات کے کسی مالی فائدے کا مطالبہ نہیں کیا۔ بین الاقوامی سطح پر صحافتی تعاون کے اعتبار سے پاناما لیکس سب سے بڑا سکینڈل ہے۔ گزشتہ 12ماہ میں 80 سے زائد ممالک کے 100 سے زائد میڈیا اداروں کے تقریباً 400 صحافیوں نے ان دستاویزات پر تحقیق کی۔ پاناما لیکس میں تقریباً 1 کروڑ 15 لاکھ دستاویزات سامنے آئے، جو کہ وکی لیکس، کیبل گیٹ، آنشورلیکس، لک لیکس اور سوئس لیکس کے سلسلے میں سامنے آنے والے دستاویزات کی مشترکہ تعداد سے بھی زیادہ ہیں۔

مزید : لاہور


loading...