پاک چین ثقافتی راہداری کا قیام عمل میں لایا جانا چاہئے ‘ شاہ فیصل آفریدی

پاک چین ثقافتی راہداری کا قیام عمل میں لایا جانا چاہئے ‘ شاہ فیصل آفریدی

لاہور (پ ر)پاک چین جوائنٹ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر شاہ فیصل آفریدی نے کہا ہے کہ پاک چین اقتصادی راہداری کو دور رس بنیادوں پر موثر بنانے کیلئے پاک چین ثقافتی راہداری کا قیام عمل میں لایا جانا چاہئے ۔یہ بات انہوں نے چین کلچرل ہیریٹیج فاؤنڈیشن سے آئے ہوے 23رکنی وفد سے خطاب کرتے ہوے کہی۔فیصل آفریدی نے کہا کہ پاک چین ثقافتی راہداری کے تحت دونوں ممالک کے عوام کے درمیان باہمی ثقافتی تعلقات کو فروغ دیا جانا چاہئے۔چین سے آئے ہوے اس 23رکنی وفد کی سربراہی چین کلچرل ہیریٹیج فاؤنڈیشن کی پریزیڈنٹ مس جیانگ جنگ نے کی ۔وفد کے پاکستان دورے کابنیادی مقصد پاک چین ثقافتی راہداری کی تشکیل کیلئے پاکستانی حکومت کی جانب سے کی جانے والی سرگرمیوں کا جائزہ لینا تھی جن کا تعین گزشتہ اجلاسوں میں کیا گیا تھا۔مندوبین کے دیگر اہم اراکین میں چین کلچرل ہیریٹیج فاؤنڈیشن کے سیکرٹری جنرل مسٹر جنگ فشانگ جبکہ تعلیمی ،تکنیکی اور تحقیقی شعبہ جات سے بھی ماہرین شامل تھے ۔وفد کا استقبال شاہ فیصل آفریدی نے پاک چین جوائنٹ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے دفتر میں کیا جہاں عصرانے کے بعد دونوں جانب کے ممبران نے پاک چین ثقافتی راہداری کے تناظر میں ہونے والی سرگرمیوں پر تبادلہ خیال کیا۔فیصل آفریدی نے اپنی گفتگو میں وفد کے مقصد کو سراہا اور بتایا کہ پاکستانی حکومت ہمسایہ برادری کے ساتھ علاقائی روابط کے ساتھ ساتھ ثقافتی سرگرمیوں کے فروغ کیلئے سرگرم ہے جس کے تحت وسیع پیمانے پر ثقافتی نمائشوں کا اہتمام کیا جا رہا ہے،

اور شعبہ تعلیم میں بھی اساتذہ اور طالب علموں کا تبادلہ کیا جا رہا ہے تاکہ عوامی ستح پہ بھی دونوں ممالک کے تعلقات استوار ہوں۔وفد کی سربراہ مس جیانگ جنگ نے فیصل آفریدی کے خطبہءِ استقبالیہ کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ تعلیم،صحت،سیاحت اورثقافت کے شعبوں میں دونوں ممالک کے درمیان زیادہ سے زیادہ تعاون اور دو طرفہ تعلقات کی حوصلہ افزائی کی جانی چاہئے اور آنے والی نسلوں تک اس دوستی کے تعلق کو منتقل کیا جانا چاہئے۔ چین کلچرل ہیریٹیج فاؤنڈیشن کے سیکرٹری جنل مسٹر کائی باؤ گوانگ نے کہا کہ پاکستان چین کو خود امختار ریاست کے طور پر تسلیم کرنے والا پہلا ملک ہے اور وقت کے ساتھ ساتھ یہ تعلقات مزید مظبوط ہوتے چلے گئے مگر یہ تعلقات محض حکومتی سطح تک محدود رہے۔ مگر اب وقت آگیا ہے کہ تعلقات کی یہ گرمجوشی عوامی سطح تک پہنچائی جاے۔جس کیلئے دونوں ملکوں کی ثقافت ، تمدن اور زبانوں کے تبادلے کی ضرورت ہے۔وفد کے قیام کے دوران پاک چین جوائنٹ چیمبر نے وفد کے سیکیورٹی انتظامات کے ساتھ ساتھ متعلقہ محکموں کے افسران کے ساتھ ملاقاتوں کا بھی اہتمام کیا ۔وفد نے اس سلسلے میں پنجاب بورڈ آف انویسٹمنٹ اینڈ ٹریڈ کے ڈائرایکٹر جنرل محمد مدسر ٹیپُو،پنجاب حلال ڈویلپمنٹ ایجنسی کے ایگزیکٹو ممبر ڈاکٹر حامد جلیل ،کامسیٹ انسٹیٹیوٹ کے ایڈوائزر شاہنواز زیدی ، انفارمیشن اینڈ کلچر ڈیپارٹمنٹ کے سیکشن آفیسر عبدالوحید ،لاہور میوزیم کے ریسرچ آفیسر اہتشام عزیز چوہدری سے خصوصی ملاقاتیں کیں ،محکمہ صحت کے نمائندوں نے بھی پاکستان میں چینی روائتی ادویات کے امکانات کے بارے میں آگاہ کیا مزید لاہور میوزیم اتھارٹیز کے ساتھ مل کر پاک چین مشترکہ میوزیم کے قیام کو بھی زیر غور رکھا گیا۔تمام گفتگو میں مندوبین اور شرکاء کی مشترکہ رائے رہی کہ عوامی ستح پر روابط کو فروغ دے کر ہی پاک چین اقتصادی راہداری کو ایک حکومتی منصوبے سے ایک معاشرتی منصوبے کی صورت میں ڈھالا جا سکتا ہے۔

مزید : کامرس


loading...