قرآن و سنت کی تعلیمات کے برعکس قانون سازی کا سوچ بھی نہیں سکتے :شہباز شریف

قرآن و سنت کی تعلیمات کے برعکس قانون سازی کا سوچ بھی نہیں سکتے :شہباز شریف

لاہور(جنرل رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف سے یہاں تمام مکاتب فکر کے جید علمائے کرام کے نمائندہ وفدنے ملاقات کی جس میں حقوق تحفظ نسواں بل کے حوالے سے تبادلہ خیال ہوا۔وزیراعلیٰ پنجاب محمدشہبازشریف نے علمائے کرام کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ قرآن و سنت کی تعلیمات کے برعکس قانون سازی کا سوچ بھی نہیں کرسکتے۔حقو ق تحفظ نسواں بل میں اصلاح کیلئے علمائے کرام کی آراء کوبھر پور اہمیت دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ علمائے کرام کی مشاورت سے بل میں ضروری تصحیح کرنے کے لئے تیار ہیں ۔ اس ضمن میں علمائے کرام کی رہنمائی کو تحسین کی نظر سے دیکھتے ہیں ۔علمائے کرام کے وفد نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حقوق تحفظ نسواں بل میں اصلاح کیلئے مکمل تعاون کریں گے۔حکومت کی جانب سے بل پر مشاورت کا عمل قابل تعریف ہے۔وزیراعلیٰ پنجاب سے ملاقات کرنے والے علمائے کرام کے وفد میں چےئرمین پنجاب قرآن بورڈمولانا غلام محمد سیالوی، چےئرمین پاکستان علماء کونسل حافظ محمد طاہر محمود اشرفی،ناظم اعلی جامعہ نعیمہ مولانا راغب حسین نعیمی،ایم پی اے سید محفوظ مشہدی،جمعیت علمائے پاکستان کے رکن مولانا محمد خان،شعیہ علماء کونسل کے رکن حافظ کاظم رضا،علامہ عارف واحدی، جمعیت اہلحدیث فیصل آباد کے رکن مولانایوسف انور،جمعیت علمائے پاکستان کے صاحبزادہ سعید احمد ،وفاق المدارس العریبیہ پاکستان کے علامہ انورارلحق مجاہد،شیخ الحدیث دارلعلوم عبیدیا اسلام وچےئرمین دینی مدارس بورڈ مفتی قوی اور خطیب بادشاہی مسجد مولانا عبدالخبیرآزاد شامل تھے جبکہ صوبا ئی وزراء رانا ثناء اللہ ،میاں عطامانیکا،متعلقہ سیکرٹریزاوراعلی حکام بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف سے یہاں چین کے قونصل جنرل یو بورن نے ملاقات کی جس میں باہمی دلچسپی کے امور، پاک چین تعلقات کے فروغ اور مختلف شعبوں میں تعاون مزید بڑھانے پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ چینی قونصل جنرل نے سانحہ گلشن اقبال پارک کی مذمت کی اور سانحہ میں قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع پر افسوس کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم دکھ کی گھڑی میں پنجاب حکومت اور اس کے عوام کے ساتھ کھڑے ہیں اور دہشت گردی کے خاتمے کیلئے پاکستان کے ساتھ ہیں۔ وزیراعلیٰ محمد شہباز شریف نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سفاک درندوں نے گلشن اقبال پارک میں بربریت کا گھناؤنا کھیل کھیلا اور اس سانحہ کے بعد پاکستانی قوم کا دہشت گردی کے خلاف عزم مزید پختہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردوں کا کوئی دین ہے نہ مذہب، یہ وحشی درندے پوری انسانیت کے دشمن ہیں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ پاکستان اور چین کے درمیان لازوال دوستی مفید معاشی تعلقات میں ڈھل چکی ہے۔ چائنہ پاکستان اکنامک کوریڈور چین کے صدر اور حکومت کا پاکستان کیلئے ایک عظیم تحفہ ہے۔سی پیک کے منصوبوں پر تیز رفتاری سے کام ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک کے منصوبوں سے پاکستان سمیت پورے خطے کو غیرمعمولی فائدہ پہنچے گا اور خطے میں معاشی و تجارتی سرگرمیوں کو فروغ ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ چائنہ پاکستان اکنامک کوریڈور کا عظیم منصوبہ پاکستان کے 18کروڑ عوام کیلئے ہے۔منصوبے سے سندھ،بلوچستان،خیبر پختونخواہ، پنجاب،گلگت بلتستان،آزاد کشمیرسمیت پورے ملک کے عوام مستفید ہوں گے۔ انہو ں نے کہا کہ چین کا پاکستان میں 46ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کا تاریخی پیکیج دراصل چینی قیادت کاپاکستان کی عوام سے والہانہ محبت اوروزیراعظم نوازشریف کی پالیسیوں پر بھر پوراعتماد کا اظہار ہے ۔چین نے پاکستان کی تقدیر بدلنے کیلئے تاریخ ساز اقتصادی پیکیج دیا ہے ،جس پر پوری پاکستانی قوم چینی قیادت اورعوام کی ممنون ہے اورہماری آئندہ نسلیں بھی چین کی اس فراخدلی، مشکل وقت میں ہاتھ تھامنے اوراربو ں ڈالر کی سرمایہ کاری کو کبھی فراموش نہیں کرپائیں گی۔ٍ وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کی زیرصدارت یہاں اعلیٰ سطح کا اجلاس منعقد ہوا جس میں عوام کو معیاری طبی سہولتیں فراہم کرنے کے حوالے سے اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ صدر اِنور گلوبل ہیلتھ (INVAR Global Health) الیگزینڈررازنسکی (Mr. Alexander Razinski)نے راولپنڈی میں 500 بستروں پر مشتمل کارڈیک ہسپتال کے منصوبے میں سرمایہ کاری میں دلچسپی کا اظہار کیا۔ وزیراعلیٰ محمد شہباز شریف نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہسپتالوں میں معیاری علاج معالجے کی فراہمی ہماری ترجیح ہے اسی لئیپنجاب حکومت نے عوام کو صحت کی معیاری سہولتوں کی فراہمی کیلئے صوبے کی تاریخ کا سب سے بڑا بجٹ دیا ہے۔ انہو ں نے کہا کہ صحت کی سہولتوں کی بہتری کیلئے ہرممکن اقدام اٹھایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اِنور گلوبل ہیلتھ کارڈیک ہسپتال کے منصوبے کیلئے قابل عمل ماڈل مرتب کرے۔ وزیراعلیٰ نے محکمہ صحت کے اعلیٰ حکام کو ہدایت کی کہ اس ضمن میں قریبی رابطہ رکھتے ہوئے جلد حتمی ماڈل پیش کیا جائے۔مشیر صحت خواجہ سلمان رفیق، سابق ایم این اے حنیف عباسی، چیئرمین منصوبہ بندی و ترقیات، سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ و میڈیکل ایجوکیشن، راولپنڈی انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کے سربراہ میجر جنرل (ر) اظہر کیانی کے علاوہ صدر (INVAR Global Health) الیگزینڈررازنسکی (Mr. Alexander Razinski) نے اجلاس میں شرکت کی۔وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف کی زیرصدارت یہاں اجلاس ہوا،جس میں صوبے میں آئل اینڈ گیس کے امور کا جائزہ لیاگیااورپنجاب میںآئل اینڈ گیس اتھارٹی بنانے کا فیصلہ کیاگیا۔اتھارٹی مکمل طورپر خود مختار ہوگی۔وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب قدرتی وسائل سے مالا مال ہے۔صوبے کے عوام کی ترقی اورخوشحالی کیلئے ان وسائل کو بروئے کار لانا وقت کی ضرور ت ہے ۔قدرتی وسائل سے استفادہ کر کے قومی معیشت کومضبوط کیا جاسکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ توانائی ،آئل اور گیس کا چولی دامن کا ساتھ ہے۔صوبے میں آئل اینڈ گیس کے شعبے میں سرمایہ کاری بڑھانے کی ضرورت ہے ۔سیکرٹری توانائی نے آئل اینڈ گیس کے اموراوردیگر معاملات بارے تفصیلی بریفنگ دی۔چیف سیکرٹری پنجاب،چےئرمین منصوبہ بندی و ترقیات،چےئرمین پنجاب پاور ڈویلپمنٹ کمپنی،سیکرٹری قانون و خزانہ نے اجلاس میں شرکت کی۔ وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف سے یہاں ترکی کے سرمایہ کاروں کے وفد نے ملاقات کی ۔ ترک سرمایہ کاروں نے صوبہ پنجاب میں توانائی سیکٹر میں سرمایہ کاری کرنے پر دلچسپی کا اظہار کیا۔ وزیراعلیٰ محمد شہباز شریف نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ توانائی بحران سے نمٹنے کیلئے بجلی کے منصوبوں پر تیز رفتاری سے کام کیا جا رہا ہے۔ حکومت روایتی ذرائع کے ساتھ قابل تجدید ذرائع سے بجلی کے حصول کیلئے کوشاں ہے اور توانائی سیکٹر میں سرمایہ کاری پر ترجیحی بنیادوں پر سہولتیں فراہم کر رہے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ ترک سرمایہ کارو ں کی جانب سے سولر انرجی کا منصوبہ لگانے میں دلچسپی خوش آئند ہے۔ ترک سرمایہ کاروں کو ہرممکن سہولتیں فراہم کریں گے۔ وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو اس ضمن میں جلد حتمی پلان مرتب کرکے پیش کرنے کی ہدایت کی۔ چیئرمین پنجاب پاور ڈویلپمنٹ کمپنی عارف سعید، چیئرمین منصوبہ بندی و ترقیات، سیکرٹری توانائی، شاہد ریاض گوندل اور پنجاب سرمایہ کاری بورڈ میں ترکی سیل کے سربراہ ہارون شوکت بھی اس موقع پر موجود تھے۔

مزید : صفحہ اول


loading...