خیبرایجنسی میں ٹیلنٹ کی کوئی کمی نہیں،طیب عبداللہ

خیبرایجنسی میں ٹیلنٹ کی کوئی کمی نہیں،طیب عبداللہ

پشاور (کرائمز رپورٹر)ڈائریکٹر سپورٹس، کلچرطیب عبداللہ نے کہا ہے کہ خیبرایجنسی میں ٹیلنٹ کی کوئی کمی نہیں، اگر حکومت اس علاقے میں تعلیم پر توجہ دے تو میں دعوے سے کہتا ہوں کہ خیبرایجنسی درجنوں ڈاکٹر، انجینئر ، پائلٹ، آرمی آفیسر و دیگر مفید شہری دے سکتے ہیں، خیبرایجنسی کے لوگوں پر دہشت گردوں کا لیبل لگانا حقائق جھٹلانے کے مترادف ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مقامی ہال میں د بریالو تڑون کے زیر اہتمام منعقدہ تقریب سے اپنے خطاب میں کیا۔ تقریب سے معروف صحافی گل احمد مروت، بریالو تڑون کے چیئرمین عبدالمنان آفریدی، مروت اورکزئی، پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشن خیبرایجنسی کے صدر قاسم خان آفریدی و دیگر نے بھی خطاب کیا ۔ طیب عبداللہ نے کہا کہ جب خیبرایجنسی میں دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑجارہی تھی تو اس دوران نجی تعلیمی اداروں کے مالکان نے تعلیمی سلسلے کو منقطع نہ کیا بلکہ تعلیمی اداروں کو بندوبستی علاقوں میں منتقل کرکے تعلیمی سلسلے کو جاری رکھا اور اس دوران ان تعلیمی اداروں کے کئی طالب علموں نے انٹری ٹیسٹ پاس کرکے میڈیکل اور انجینئرنگ کالجوں میں داخلہ لیا جو نہ صرف ان تعلیمی اداروں کے لئے بلکہ پورے خیبرایجنسی کے لئے کسی اعزاز سے کم نہیں میں ان تعلیمی اداروں کو اس کاوش پر دل کی اتھاہ گہرائیوں سے مبارک باد پیش کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ جس وقت پاک آرمی دہشت گردی کی جنگ لڑرہی تھی تو اس دوران تعلیمی اداروں کے سربراہان اور اساتذہ جاہلیت کے خلاف جنگ میں مصروف رہے، میں حکومت سے درخواست کرتا ہوں کہ دہشت گردی کے شکار تعلیمی اداروں کی ازسر نو تعمیر کرکے اسے تمام تر سہولیات سے آراستہ کیا جائے تاکہ خیبرایجنسی کے طلباء اپنے ہی علاقوں میں تعلیمی سلسلے کو جاری رکھیں۔ انہوں نے حکومت سے یہ بھی مطالبہ کیا کہ خیبرایجنسی میں کھیل کے میدان تعمیر کئے جائیں تاکہ یہاں کے قبائل تعلیمی میدان میں اپنی کامیابی کے جوہر دکھاسکیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...