حکمران ہوش کے ناخن لیں، بھارت کی آبی جارحیت کے خلاف اقوام متحدہ میں آواز اٹھائیں، آبی و زرعی کانفرنس

حکمران ہوش کے ناخن لیں، بھارت کی آبی جارحیت کے خلاف اقوام متحدہ میں آواز ...

لاہور(کامرس رپورٹر)کشمیر پاکستانی قوم کی شہہ رگ ہے، بھارت آبی جارحیت کے ذریعے سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی اورہماری سر زمین کو بنجر بنانے کے لیے پاکستان کے پانی پر قبضہ جماکردریاؤں پر ڈیمز بنا رہا ہے ۔حکمران ہوش کے ناخن لیں اور پاکستان کے ساتھ ہونے والی ناانصافی پر اقوام متحدہ میں آواز اٹھائیں، ملک بھر کی کاشتکار تنظیمیں اور کسان جلد ہی لاکھوں کی تعداد میں اسلام آبادکی طرف مارچ کر یں گے اور بھارتی آبی جارحیت و معاشی دہشت گر دی کے خلاف کارروائی کیلئے پاکستانی حکمرانوں سے مطالبہ کیا جائے گا ۔ان خیالات کا اظہار سیاسی ، مذہبی رہنماؤں، زرعی ماہرین اور کسان تنظیموں کے رہنماؤں نے گزشتہ روز پاکستان متحدہ کسان محاذ کے زیر اہتمام مقامی ہوٹل میں منعقد ہ آبی و زرعی کانفرنس میں کیا ۔ اس موقع پر جماعت اسلامی پاکستان کے مرکزی جنرل سیکرٹری لیاقت بلوچ، پیپلز پارٹی کے صوبائی صدر میاں محمد منظور وٹو، اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی میاں محمود الرشید ، جماعت الدعوہ پاکستان کے مرکزی امیر پروفیسر عبدالرحمن مکی ، پاکستان متحدہ کسان محاذ کے سربراہ ایوب خان میو، پاکستان مسلم لیگ فنکشنل کے سینٹر محمد علی درانی ، تحریک انصاف کے مرکزی راہنما بریگیڈیر (ر)محمد اسلم گھمن، پاکستان نیشنل ریفارمر کے چیئرمین بریگیڈیر نادر میر، سابق وفاقی سیکرٹری داخلہ تسلیم نورانی ، سابق چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریونیو عنصر جاوید، جمعیت علمائے پاکستان کے صدر پیر اعجاز ہاشمی ، استقلال پارٹی کے صدر سید منظور حسین گیلانی، چیئرمین پنجاب یوتھ کونسل میاں علی حمزہ و کسان رہنما ؤ ں سردار فاروق دریشک ، علی بہادر کھچی، سردار امجد طفیل ، یحیےٰ کنول ، افتخار شاکر ، چوہدری طاہر علی گجرسمیت دیگر مو جو د تھے ۔میاں محمد منظور وٹو نے کہا بھارتی ڈیموں کامنصوبہ حقیت میں پاکستان کی زراعت کو تباہ کرنے کی سازش ہے ، یہ ہماری آنے والی نسلوں کے مستقبل کا مسئلہ ہے، میں خود ایک کسان کا بیٹا ہوں، بھارتی آبی جارحیت و دہشت گردی کے خلاف پاکستان کے کسانوں کا ساتھ دونگا۔میاں محمود الرشید نے کہا کہ حکمران ہماری زندگی موت کے مسئلہ پر سوئے ہوئے ہیں، میں صوبائی اسمبلی میں فوری طور پر اسمبلی کی کارروائی کو رکوا کر بھارت کی آبی جارحیت و دہشت گردی کے خلاف تحریک پیش کروں گا اور حکومت سے اقدامات کے لئے تمام پارلیمانی لیڈروں کی میٹنگ بھی بلواؤ ں گا او رعمران خان سے بھی ایک منظم لائحہ عمل اختیار کرنے کی بات کرونگا۔ ایو ب خان میونے کہاکہ بھارت سندھ طاس معاہدہ 1960توڑنے کی دھمکیاں دیتا ہے جو بین الاقوامی برادری کے لئے لمحہ فکریہ ہے وہ اس معاہدہ کی پامالی کرتے ہوئے پاکستان کے دریاؤں چناب ، جہلم اور سندھ کا پانی روک رہا ہے، اقوام متحدہ و اقوام عالم کو نوٹس لینا چاہئے ، بھارتی جارحیت کے خلاف ہم لاکھوں کسان اسلام آباد میں ڈیپلومیٹ انکلیور کے سامنے سراپا احتجاج ہونگے۔ لیاقت بلوچ نے کہا کہ حکومت فوری طور پر چاروں صوبائی اسمبلیوں ، قومی اسمبلی پاکستان وسینٹ کا مشترکہ اجلاس بلا کر بھارتی آبی جارحیت و دہشت گردی کے خلاف یکجہتی کا مظاہرہ کرے اور اس کے خلاف مذمت کا اعلان کرے ۔ پروفیسر عبدالرحمن مکی نے پاکستان متحدہ کسان محاذا ور کسانوں کی اس تحریک کی مکمل حمایت کا اعلان کیا اور کہا کہ لاکھوں مجاہدین جموں و کشمیر کو آزاد کرانے کے لئے بیتاب ہیں جبکہ حکومت ہر اس عمل کرنے سے گریزاں ہیں جو پاکستان کے دریاؤں اور کشمیر کی آزادی پر منتج ہو۔انہوں نے کہا ہم آج سے پاکستا ن متحدہ کسان محاذ کی اس تحریک کا باقاعدہ حصہ ہیں۔

آبی و زرعی کانفرنس

مزید : صفحہ آخر


loading...