بحری جہازوں کیلئے دنیا کی پہلی آبی سرنگ

بحری جہازوں کیلئے دنیا کی پہلی آبی سرنگ
 بحری جہازوں کیلئے دنیا کی پہلی آبی سرنگ

  


اوسلو (مانیٹرنگ ڈیسک )یورپی ملک ناروے اپنے ایک جزیرہ نما علاقے میں سمندر کے بیچوں بیچ واقع پہاڑمیں بحری جہازوں کے گزرنے کے لیے سرنگ تیار کرے گا۔اس سرنگ کی تیاری کے بعد بحری جہاز اور کشتیاں سمندر کی ایک طرف سے دوسری طرف آسانی سے گزر سکیں گی۔یہ سرنگ شمال مشرقی ناروے میں جزیرہ نما علاقے میں سمندر کے بیچ میں واقع پہاڑ کو توڑ کر بنایا جائے گا۔نارویجین کوسٹل ایڈمنسٹریشن (این سی اے) کے مطابق یہ سرنگ نارویجین نیشنل ٹرانسپورٹ پلان (این ٹی پی) کے تحت تعمیر ہونے والے منصوبوں کے تحت بنایا جانے گا، اور اس کا پہلا حصہ 2023 میں مکمل ہونے کے بعد اسے کھولا جائے گا۔این سی اے کے مطابق 36 میٹر چوڑی اور 49 میٹر طویل سرنگ پر کم سے کم 31 کروڑ 40 لاکھ امریکی ڈالر لاگت آئے گی، اور منصوبے کا پہلا مرحلہ 6 سال میں مکمل ہوگا، جب کہ منصوبے کی تکمیل 2029 میں ہوگی۔وزارت ٹرانسپورٹ کے مطابق منصوبے پر تعمیراتی کام کا ا?غاز 2019 میں ہوگا، اور سرنگ کی تیاری میں پہاڑ سے 80 لاکھ ٹن پتھر نکالا جائے گا۔این سی اے کے مطابق سرنگ کو بیک وقت 2 جہازوں کے گزرنے کے لیے محفوظ بنانے کے لیے سرنگ میں جدید طرز کی لائٹیں نصب کی جائیں گی، کیوں کہ وہاں سورج کی روشنی نہیں ہوگی۔

مزید : صفحہ اول


loading...