ادبی میلے میں وسیب کے اہل قلم کو نظر انداز کرنے کی مذمت کرتے ہیں،سرائیکستان عوامی اتحاد

ادبی میلے میں وسیب کے اہل قلم کو نظر انداز کرنے کی مذمت کرتے ہیں،سرائیکستان ...

ملتان(جنرل رپورٹر)زکریا یونیورسٹی کے ادبی میلے میں وسیب کے اہل قلم (بقیہ نمبر30صفحہ12پر )

کو نظر انداز کرنے کی مذمت کرتے ہیں ۔ اردو ، پنجابی اور سرائیکی کے نام پر ادبی میلہ سرائیکی ایریا سٹڈی سنٹر پر قبضے کے منصوبے کا حصہ ہے جسے کسی صورت کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ ان خیالات کا اظہار سرائیکستان عوامی اتحاد کے رہنماؤں پروفیسر شوکت مغل ، رانا محمد فراز نون ، ظہور دھریجہ ، عابدہ بخاری ، مطلوب شاہ نے ایک میٹنگ کے دوران کیا ۔ انہوں نے کہا کہ زکریا یونیورسٹی وسیب کا ادارہ ہے ، یہاں اردو اور سرائیکی مشاعرہ تو سمجھ آنے والی بات ہے لیکن پنجابی کو زبردستی شامل کرنے کا کیا جواز ہے ؟ سرائیکی رہنماؤں نے کہا کہ سرائیکی دشمنی میں جماعت اسلامی والے اور پیپلز پارٹی کے ڈاکٹر انوار اینڈ کمپنی اندر خانہ ایک ہو چکی ہے اور انہوں نے اندر خانہ فیصلہ کیا ہے کہ سرائیکی کو ناکام کرکے یونیورسٹی میں پنجابی کو مسلط کیا جائے گا ۔ میٹنگ میں وائس چانسلر سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ یونیورسٹی کے طاہر اور امین ہونے کا ثبوت دیں اور جو لوگ یونیورسٹی میں سرائیکی پنجابی تنازعہ قائم کر کے حالات خراب کرنا چاہتے ہیں ان کے خلاف سخت ایکشن لیں۔ میٹنگ میں پروفیسر پرویز قادر خان ، عنایت اللہ مشرقی ، ممتاز خان ڈاہر، رانا امیر علی، رانا نعمان نون ، شعیب نواز بلوچ، جاوید چنڑ، عبدالستار تھہیم ، پروفیسر مظہر امام اور دوسرے موجود تھے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...