سبزہ زار میں نامعلوم موٹر سائیکل سوار کی فائرنگ ،لاہور یونیورسٹی کا ریٹائرڈ پروفیسرقتل ،ملزم فرار ہونے میں کامیاب ،پولیس نے تحقیقات شروع کر دیں

سبزہ زار میں نامعلوم موٹر سائیکل سوار کی فائرنگ ،لاہور یونیورسٹی کا ریٹائرڈ ...
سبزہ زار میں نامعلوم موٹر سائیکل سوار کی فائرنگ ،لاہور یونیورسٹی کا ریٹائرڈ پروفیسرقتل ،ملزم فرار ہونے میں کامیاب ،پولیس نے تحقیقات شروع کر دیں

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) سبزہ زار کے علاقے میں نامعلوم موٹر سائیکل سوار حملہ آور نے ایک68سالہ شخص کو گولی مار کر ہلاک کر دیا ،مقتول کی شناخت ڈاکٹر اشفاق احمد کے نام سے ہوئی ہے جس کا تعلق اقلیتی طبقے(قادیانی)سے بتایا جا رہا ہے ،حملہ آور موٹر سائیکل سوار با آسانی فرار ،پولیس نے تحقیقات شروع کر دیں۔

تفصیلات کے مطابق سبزہ زار کے علاقے میں ڈاکٹر اشفاق احمد اپنے بھتیجے شہباز کے ہمراہ گاڑی پر کسی کام سے جا رہے تھے کہ ہیلمنٹ پہنے نامعلوم موٹر سائیکل سوار حملہ آور نے ڈاکٹر اشفاق احمد کو ٹارگٹ کرتے ہوئے گز بھر کے فاصلے سے گولی چلا دی ،گولی لگنے سے ڈاکٹر اشفاق احمد موقع پر ہی ہلاک ہو گئے تاہم ساتھ بیٹھے مقتول کا بھتیجا اشفاق اس حملے میں محفوظ رہا ۔ڈاکٹر اشفاق احمد حال ہی میں لاہور یونیورسٹی سے بطور پروفیسر ریٹائرڈ ہوئے تھے۔تاہم ابھی تک یہ واضح نہیں ہوا کہ قتل کا ذاتی دشمنی کا نتیجہ ہے یا پھر دہشت گردی کا نتیجہ ؟۔ دوسری طرف برطانوی خبر رساں ادارے نے سبزہ زار میں قتل کی اس واردات پر پولیس کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ کہ 68 سالہ ڈاکٹر اشفاق کو بظاہر ہدف بنا کر قتل کیا گیا ہے تاہم اس بارے میں حتمی رائے تحقیقات کے بعد ہی قائم کی جا سکے گی۔بی بی سی کے مطابق 10روز کے دوران پنجاب میں کسی احمد ی فرد کی ہلاکت کا یہ دوسرا واقعہ ہے ،اس سے قبل 30 مارچ کو ننکانہ صاحب میں نوبیل انعام یافتہ پاکستانی سائنسدان ڈاکٹر عبدالسلام کے کزن اور جماعت احمدیہ کے رکن ملک سلیم لطیف کو اس وقت قتل کیا گیا تھا جب وہ اپنے بیٹے کے ہمراہ اپنے دفتر جا رہے تھے۔قتل کی اس واردات میں بھی ملک سلیم کا بیٹا اس حملے میں محفوظ رہا تھا ۔

مزید : لاہور


loading...