پنجاب یونیورسٹی کے باہر بینچ پر بیٹھی لڑکیوں کو دیکھ کر اس رکشہ ڈرائیور نے کیا شرمناک ترین کام شروع کر دیا؟ لڑکیوں نے ویڈیو بنا کر سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کی تو ہنگامہ مچ گیا، کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا کہ لاہور کی مصروف سڑک پر ایسا کام بھی ہو سکتا ہے

پنجاب یونیورسٹی کے باہر بینچ پر بیٹھی لڑکیوں کو دیکھ کر اس رکشہ ڈرائیور نے ...
پنجاب یونیورسٹی کے باہر بینچ پر بیٹھی لڑکیوں کو دیکھ کر اس رکشہ ڈرائیور نے کیا شرمناک ترین کام شروع کر دیا؟ لڑکیوں نے ویڈیو بنا کر سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کی تو ہنگامہ مچ گیا، کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا کہ لاہور کی مصروف سڑک پر ایسا کام بھی ہو سکتا ہے

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) عام آدمی نے اپنا کوئی مسئلہ دنیا کے سامنے لانا ہو تو سوشل میڈیا کی صورت میں اسے سب سے بہترین پلیٹ فارم نظر آتا ہے اور اب تک اس کے ذریعے کئی لوگ مستفید ہو چکے ہیں لیکن اس مرتبہ لاہور کی لڑکیوں نے جس واقعے کی ویڈیو اپ لوڈ کی ہے، اس نے پاکستانیوں میں غم و غصے کی لہر دوڑا دی ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔شاہد آفریدی کی ٹویٹ کے بعد احمد شہزاد بھی میدان میں کود پڑے، انہوں نے کیا کہا؟ جان کر آپ کو پہلی مرتبہ احمد شہزاد پر بے حد پیار آئے گا 

سوشل میڈیا پر اپ لوڈ ہونے والی ویڈیو پنجاب یونیورسٹی کے باہر کی ہے جہاں ایک رکشہ ڈرائیور چند لڑکیوں کو بیٹھے دیکھ کر انتہائی شرمناک اور گھٹیا کام شروع کر دیتا ہے۔ لڑکیاں پہلے تو شرم سے پانی پانی ہوتی ہیں لیکن اس کے بعد ویڈیو بنانے اور اس معاملے کو دوسروں کے سامنے لانا کا فیصلہ کرتی ہیں اور جیسے ہی یہ ویڈیو منظرعام پر آئی ہے تو ہر جانب سے غم و غصے کا اظہار کرنے کیساتھ ایسے واقعات کے سدباب کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

یہ واقعہ پنجاب یونیورسٹی لاہور کے مین گیٹ کے سامنے پیش آیا اور ذرائع کا کہنا ہے کہ اعلیٰ حکام کی جانب سے اس معاملے پر کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔

ویڈیو سامنے آئی تو جاوید سکھی نامی ایک شخص نے لکھا ”واقعی مار کھانے والی حرکت ہے، لیکن عورتوں کے حقوق کی بات کرنے والوں کیلئے اتنا ضرور کہوں گا کہ ’اس کا سامان، اس کی مرضی‘۔“

اکرم علی نے لکھا ”اگر یہاں پر کوئی آپ کی رشتہ دار ہوتی تو پھر آپ کیا کہتے؟“

مریم نادر نے لکھا ”یہ شخص ’میرا جسم، میری مرضی‘ والے نعرے کو نئی سطح پر لے گیا ہے“

اسد حسین نے مذاق کرتے ہوئے لکھا ”اگر نواز شریف وزیراعظم ہوتے تو ایسا کبھی نہ ہوتا“

عبید خان نے لکھا ”یا وہ رکشہ سٹارٹ کرنے کیلئے لیور کھینچ رہا ہے، اسے غلط مت سمجھو“

سدرہ اقبال نے لکھا ”ثبوت کے طور پر ویڈیو بنانے کے بعد یہ لڑکی رکشہ والے پر چیخی چلائی کیوں نہیں اور آس پاس سے گزرنے والوں سے مدد کیوں نہ مانگی!“

اقصیٰ مغل نے لکھا ”لعنت ہے اس پر ، بے غیرت انسان۔۔۔ لڑکیاں خود پکڑ کر پھینٹی لگائیں تو ان جیسے لوگوں کی جرات نہ ہو۔۔۔ یہاں کوئی بھی کارروائی نہیں کرے گا، سب خود کرنا پڑتا ہے“

راحیل کیانی نے لکھا ”جس لڑکی نے یہ ویڈیو بنائی ہے اس کے بعد رکشے کا رجسٹریشن نمبر بھی ضرور ہو گا۔ وہ ویڈیو اور رجسٹریشن نمبر متعلقہ حکام کو دے“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -علاقائی -پنجاب -لاہور -