خان صاحب سے کنٹینر چاہئے نہ کھانا ،سندھ کے وسائل پر ڈاکہ ڈالا جارہا ہے ،مراد علی شاہ

خان صاحب سے کنٹینر چاہئے نہ کھانا ،سندھ کے وسائل پر ڈاکہ ڈالا جارہا ہے ،مراد ...

کراچی(آئی این پی ) وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ ہمارے یہاں برداشت کم ہوتی جارہی ہے، ہمیں اپنی نئی نسل کو بھٹائی کے پیغام کو سمجھانا ہے، بچے چاہے کوئی زبان بولتے ہوں ان کو بھٹائی پڑھنا چاہیئے۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے کراچی میں منعقدہ شاہ عبد اللطیف کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے یہاں برداشت کم ہوتی جارہی ہے، شاہ عبدالطیف کا پیغام پڑھیں اور سمجھیں تو دلوں کی بات کریں، شاہ عبدالطیف کے چاہنے والے ان کے پیغام سے سیکھیں۔وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ اپنی زبان، ادب، ثقافت اور کلچر پر کام کرنے کی ضرورت ہے، بھٹائی میری روح میں ہیں، لیکن ان کے رسالے کا ٹھیک سے مطالعہ نہ کرسکا۔ حمید اخوند نے رسالے کی تعلیم کا وعدہ کیا لیکن پورا نہ کر سکے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنی نئی نسل کو بھٹائی کے پیغام کو سمجھانا ہے، بچے چاہے کوئی زبان بولتے ہوں ان کو بھٹائی پڑھنا چاہئے۔سیاسی گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ وزیر اعظم نے جو 162ارب کا وعدہ کیا وہ آپ کو دوں گا، میں سندھ حکومت کے فنڈز سے دوں گا، 162ارب کہاں خرچ ہوں گے کسی ایک منصوبے کا بھی نہیں بتایا۔انہوں نے کہا کہ ہمیں خان صاحب سے کنٹینر چاہئے نہ ہی کھانا، تھر کی بجلی کے لیے ہم ایک ارب خرچ کر چکے ہیں۔ بجلی نیشنل گرڈ میں جا رہی ہے۔ ہم تھر کی بجلی کا مسئلہ حل کریں گے۔وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ اسد عمر آئی ایم ایف سے مذاکرات کے لیے جا رہے ہیں، بے نظیر کا وژن تھا تھر کول سے بجلی بنائی جائے۔ سندھ کے بجلی، گیس اور دیگر وسائل پر ڈاکہ ڈالا جا رہا ہے۔

مراد علی شاہ

مزید : صفحہ آخر


loading...