پی ،ٹی ،ایم کے نام پر کسی کو گمراہ کرنے کی اجازت نہیں ‘ خان بہادر

پی ،ٹی ،ایم کے نام پر کسی کو گمراہ کرنے کی اجازت نہیں ‘ خان بہادر

باجوڑ (نمائند ہ پاکستان)ضلع باجوڑ میں پی ،ٹی ،ایم کے نام پر کسی کو گمراہ کرنے کی اجازت نہیں دیں گے طویل بدامنی کے بعد یہاں چیمبر آف کامرس کے نام سے بنائی گئی کابینہ کو خود ساختہ سمجھتے ہیں باجوڑ کے بازاروں میں پی ،ٹی ،ایم سمیت کسی بھی سیاسی جماعت کو احتجاج کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دے سکتے ان خیالات کا اظہار باجو ڑ تاجر برادری نے باجوڑ پریس کلب میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس کے دوران کیا انہوں نے کہا کہ قبائل محب وطن ہیں پاک فوج اور قبائلی عوام کے لازوال قربانیوں کی وجہ سے یہاں پر امن فضاء قائم ہوچکا ہے اور ہم کسی بھی صورت یہاں کے پرامن ماحول کو ایک دفعہ پھر خراب کرنے کی اجازت نہیں دینگے اس موقع پر خار بازار کے صدر حاجی خان بہادر ،صدیق اآباد کے صدر حاجی اکبر جان ،عنایت کلی بازار کے صدرحاجی محمد زمان لوئی سم بازار کے صدر حاجی فقیر ،خار ہسپتال یڈیسن دکانات کے صدر خلیل اللہ جان و دیگر نے کہا کہ ضلع باجوڑ آپریشن کے دوران سینکڑوں دکانات بربادی کا شکار ہو چکے ہیں اور عوام کا قیمتی سامان راکھ کے ڈھیر میں تبدیل ہو چکے ہیں 2008 اپریشن کے بعد محکمہ سمیڈا نے بھی عوام کے آنکھوں میں دھول جھونکتے ہوئے ہزاروں فارم جمع کرکے یہاں کے تاجر برادری کو بے یارو مدد گار چھوڑ کرپشن کا بازار گرم کیا اُنہوں نے یہ بھی کہا کہ موجودہ حکومت سمیڈا کے قرضے پر سیاست کر رہی ہے حالانکہ یہ پیشہ ورلڈ بینک کے جانب سے اپریشن سے ماتثرہ قبائلی عوام کیلئے آیا ہے اُنہوں نے اس بات پر بھی خدشہ ظاہر کیا کہ گزشتہ ادوار کی طرح آج بھی عوام کا پیسہ لوٹ مار کا شکار نہ ہو اس لئے ہم ایک وفد کی شکل میں جاکر محکمہ سمیڈا کے اہلکاروں سے اس گرانٹ میں شفافیت پیدا کرنے پر بات کرینگے ۔ اُنہوں نے یہ بھی کہا کہ باجوڑ میں بھرپور امن و امان قائم ہو چکا ہے اس لئے ہم پی،ٹی،ایم سمیت کسی بھی سیاسی پارٹی کو ہمارے بازاروں میں جلسے جلوسوں کی اجازت نہیں دیتے کیونکہ اس قسم کے اقدامات سے ہمارے بازاروں کے امن و امان کی خرابی کیساتھ ہمارے تاجروں کا نقصان ہو رہا ہے اُنہوں نے چیمبر آف کارس کے موجودہ کابینہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ جن لوگوں کی فیکٹریاں نہیں ہوتی وہ چیمبر آف کامرس کا عہدیدار نہیں بن سکتا اس لئے ہم کٹھ پتلی چیمبر آف کامرس کو مسترد کرتے ہیں اور اگر ضرورت پڑی تو ان کے خلاف عدالت کا دروازہ بھی کھٹکھٹائے گے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...