کورونا کا بذریعہ تعویز علاج کرنے والا جعلی پیر پکڑا گیا!

کورونا کا بذریعہ تعویز علاج کرنے والا جعلی پیر پکڑا گیا!

  

بیرون ملک سے گجرات آنے والے کئی سادہ لوح شہری پیروں کے ہاتھوں لٹنے لگے

مرزا نعیم الرحمان

ملک کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر جہاں کورونا وائرس کا علاج ترقی یافتہ ممالک بھی دریافت نہیں کر سکے پاکستانی پیروں اور فقیروں نے دنیا میں موجود ہر قسم کے علاج کا دم درود‘ تعویز دھاگے کر کے دریافت کر رکھا ہے جبکہ ان کے ڈیرے ایسے لاتعداد سائلین سے بھرے پڑے رہتے ہیں جو ان کے آستانے کا رخ کرتے ہیں اور پھر بعض اوقات ایسے واقعات رونما ہوتے ہیں کہ سائلین کے ورثا ا ن جعلی پیروں اور فقیروں کو اپنے منطقی انجام تک پہنچا دیتے ہیں چند یوم قبل پیر لیاقت علی سکنہ رانیوال سیداں کے بھائی نے تھانہ صدر جلالپور جٹاں میں اپنے بھائی پیر لیاقت علی شاہ کا مقدمہ درج کرایا کہ اسے نامعلوم افراد اغوا کر کے لے گئے ہیں جسے وہ تلاش کرتا رہا ہے مگر مل نہیں سکا اس سلسلہ میں پولیس نے کوشش تو کی لیکن ملزمان اور مغوی تلاش نہ کیے جا سکے بعد ازاں مدعی نے چار ملزمان مراتب علی‘ شفاقت علی‘ بشری بی بی‘ رفاقت علی کو مقدمہ میں نامزد کر دیا پیر لیاقت علی کے مشکوک کمرے کا کرائم سین گوجرانوالہ سے سرچ کرایا گیا جنہوں نے وہاں سے چار پارسل شدہ اشیاء حوالہ پولیس کیے جسے لاہور لیبارٹری میں ٹیسٹ کیلئے بجھوا دیا گیاتھانہ صدر جلالپور جٹاں کے زیرک اور انتہائی محنتی ایس ایچ او الطاف گوہر نے مدعی مقدمہ کی درخواست پر دو خواتین سمیت تین افراد کو گرفتار کر کے تفتیش شروع کی تو معلوم ہوا مذکورہ پیر نے دم درود کے بہانے ملزمان کے گھر جا کر مرکزی ملزم کی بیوی (ن) سے زیادتی کی ہے جس پر ملزما ن مذکورہ نے پیر کو قتل کرنے کے بعد اسکی نعش کے ٹکڑے ٹکڑے کر کے ساروکی نہر میں بوری میں بند کر کے بہا دی یہ امر قابل ذکر ہے کہ شادیوال گاؤں جہاں کورونا وائرس وسیع پیمانے پر پھیلا ہوا ہے اور پولیس نے اس علاقے میں سخت ترین لاک ڈاؤن کر رکھا ہے اور طبی عملہ وائرس کا شکار اور دیگر افراد کے ٹیسٹ لے کر اپنے فرائض منصبی ادا کر رہے ہیں تو ایسے افراد کی بھی کوئی کمی نہیں جو نزلہ‘ زکام وغیرہ کا شکار ہو کر اسے کورونا سمجھ لیتے ہیں اور پھر دم درود کے لیے پیروں اور فقیروں کے ڈیروں پر جا کر اسکا علاج تلاش کرتے ہیں اس سے قبل بھی گجرات پولیس نے پی آر او برانچ کے سربراہ چوہدری اسد گجر کی محنت اور کوششوں سے دو ایسے پیروں کو تھانہ لاری اڈا‘ تھانہ سٹی کے انچارج رائے فیاض احمد جو تعلیم کے حوالے سے پی ایچ ڈی ڈگری کے حامل ہیں نے اپنے تھانہ کے علاقے سے نجومیوں‘ جعلی پیروں اور فقیروں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر رکھا ہے انہوں نے ایسے درجنوں گھروں اور مقامات کو لاک ڈاؤن کے حوالے سے اختیارات کی بدولت تالے لگا کر بند کر دیا ہے جہاں پر لوگ کورونا وائرس کا علاج بذریعہ دم درود کرانے کے لیے رجوع کرتے تھے یہ گجرات پولیس کا ہی طرہ امتیاز ہے کہ وہ گجرات کے عوام کو اور بالخصوص ایسے افراد اور خواتین کو ان پڑھ اور جاہل ہیں تھانہ لاری اڈا پولیس نے شادیوال روڈ پر محمد یوسف ولد محمد طفیل نامی ایک جعلی پیر اپنے چیلے محمد ابراہیم ولد سردار محمد کیساتھ ملکر سادہ لوح شہریوں سے دم کرنے کے بہانے بھاری رقوم بٹور رہا ہے جس پر پولیس نے فوری طور پر ایکشن لیتے ہوئے چھاپہ مارا جس سے جعلی پیر کو چیلے سے حراست میں لے لیا گیا ملزمان نے دوران تفتیش انکشاف کیا ہے کہ وہ جعلی تعویزو ں اور دم کرنے کے بہانے عوام سے نذرانے اور رقم وصول کرتے ہیں کچھ عرصہ قبل بھی اس علاقے سے ایک جعلی پیر کو گرفتار کیا گیا تھا تھانہ کھاریاں صدر پولیس نے بیرون ملک سے آئے ہوئے افراد کو کورونا کا دم کرتے ہوئے موقع پر گرفتار کر لیا اور انہیں جیل بھیج دیا ایس ایچ او تھانہ صدر کھاریاں مجاہد عباس نے ایک جعلی پیر موضع گنجہ میں کرونا وائر س کے دم کے نام پر شہریوں کو بیوقو ف بنا رہا ہے اطلاع ملتے ہی ایس ایچ او تھانہ صدر کھاریاں نے چھاپہ مار ٹیم تشکیل دے کر جعلی پیرعاشق حسین کوموضع گنجہ سے رنگے ہاتھوں گرفتار کرلیا ملزم قبل ازیں مختلف قسم کے دم کرکے سادہ لوح لوگوں سے رقم بٹورتا تھا اب اس نے کرونا وائرس کا دم بھی شروع کردیا تھا جس کے خلاف تھانہ صدر کھاریاں میں مقدمہ درج کیا گیا بدقسمتی کی یہ انتہا ہے کہ جہاں ترقی یافتہ ممالک کورونا وائرس کا علاج دریافت نہیں کر سکے اور روزانہ ہزاروں افراد موت کے گھاٹ اتر رہے ہیں وہاں پر پاکستان میں تعلیم کی کمی اور جہالت کی وجہ سے لوگ اس کا علاج پیروں اور فقیروں کے ڈیرے پر تلاش کر رہے ہیں مذکورہ بالا پیر کے قتل کی وجوہات جو بھی ہوں بہرحال پیروں اور فقیروں کے موبائل یونٹ گلیوں اور محلوں میں یہ فقرے کستے ہوئے نظر آرہے ہیں کہ گجرات جو پنجاب کا کورونا کے حوالے سے سب سے زیادہ متاثرہ ضلع ہے میں وسیع پیمانے پر کورونا پھیل چکا ہے پوری دنیا اسکا علاج دریافت نہیں کر سکی انکے تعویز دھاگے اور پھونک میں اس قدر برکت ہے کہ ہر قسم کی بیماری دور ہو جاتی ہے گجرات کے عوام وسیع پیمانے پر بیرون ملک مقیم ہیں اور بیرون ملک سے جو لوگ گجرات واپس پہنچے ہیں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کا سب سے بڑا سبب بنے ہیں دیگر گرفتار ہونیوالے پیروں میں پیرعاشق حسین‘ پیر محمد یوسف‘ پیر محمد ابراہیم‘ بھی شامل ہیں ڈی پی او گجرات سید توصیف حیدر نے کہا ہے کہ جعلی پیروں اور عاملوں کے خلاف گجرات پولیس کا ضلع بھر میں خصوصی آپریشن جاری ہے اگر کسی بھی علاقہ میں ایسے جعلی پیر موجود ہوں تو اس کی اطلاع فوری طور پر پولیس کو دیں تاکہ انکے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لاکر سادہ لوح لوگوں کو ان سے محفوظ رکھا جا سکے۔

۔۔۔۔۔

مزید :

ایڈیشن 1 -