شادی ہالز‘ مارکی بند ہونے سے 7لاکھ افرادبے روزگار

شادی ہالز‘ مارکی بند ہونے سے 7لاکھ افرادبے روزگار

  

ملتان (نیوز رپورٹر) 14 مارچ سے شادی ہالز اور مارکی بند ہونے کے باعث 7 لاکھ لوگ بے روز گار ہوچکے ہیں،7 لاکھ لوگ 42 لاکھ خاندانوں کے کفیل ہیں،اوسط ایک خاندان کے 6 افراد ہوں تو 42 لاکھ لوگوں اس کاروبار کے باعث گزر اوقات کر ر ہے ہیں لیکن 7 لاکھ لوگوں کے بے روز گار ہونے سے کے باعث 42 لاکھ لوگ اس سے متاثرہورہے ہیں ان خیالات کا اظہار (بقیہ نمبر36صفحہ6پر)

میرج ہال ایسوسی ایشن ملتان کے چیئرمین حسن خان بلوچ،صدر میاں نصرت حسین،جنرل سیکرٹری کاشف ظفر،ڈاکٹر زین العابدین نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا،انہوں نے مزید کہا کہ مارچ،اپریل میں ہمارا کاروبار سیزن ہوتا ہے شادی بیاہ ودیگر تقریبات ہوتی ہیں، ہماری حکومت سے اپیل ہے کہ ہمیں کام کرنے کی اجازت دی جائے جس طرح حکومت نے دیگر اداروں کو مقررہ شرائط پر کام کرنے کی اجازت دی ہے،ہمحکومتی پیئرمیٹر کے مطابق تمام انتظامات کریں گے جس میں سنیٹائزر،ماسک اور سپرئے کا استعمال کیا جائے گااور مہمانوں کو بیٹھنے کی حد مقرر کردی جائے گی،جس طرح حکومت نے دیگر اداروں کو مقررہ شرائط پر کام کرنے کی اجازت دی ہے،ملکی حالات کے پیش نظر ہم ہر وہ کام کرنے کو تیار ہیں جس سے انسانی زندگی کو تحفظ دلایا جاسکے،ہم وزیراعظم،وزیراعلی پنجاب،کمشنر ملتان وڈپٹی کمشنر ملتان سے اپیل کرتے ہیں شادی ہال اور مارکیز کو کھولا جائے تاکہ اس کاروبار سے منسلک لوگوں کو بچا سکیں ورنہ وہ کرونا وائرس کا شکار تو نہ ہوں گے بھوک سے ضرور مرجائیں گے۔

بے روزگار

مزید :

ملتان صفحہ آخر -