گورنرسندھ سے ڈائر یکٹرجنرل پاکستان کوسٹ گارڈز کی ملاقات

  گورنرسندھ سے ڈائر یکٹرجنرل پاکستان کوسٹ گارڈز کی ملاقات

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)گورنرسندھ عمران اسماعیل سے ڈائریکٹر جنرل پاکستان کوسٹ گارڈ ز بریگیڈیئر ثاقب قمر نے گورنرہاؤس میں ملاقات کی۔ ملاقات میں سمندری حدود میں اسمگلنگ کی روک تھام، کورونا وائرس کنٹرول کے اقدامات، اس ضمن میں عوام میں آگاہی بیدار کرنے کی کاوشوں کی ضرورت اور باہمی دلچسپی کے دیگر امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس موقع پر گورنرسندھ نے کہا کہ کرونا وائرس عالمی مسئلہ بن چکا ہے اور یہ پاکستان میں بھی تیزی سے پھیل رہا ہے جس کے خاتمہ کے لئے حکومت نے لاک ڈاؤن جیسے مشکل اقدامات اٹھائے کیونکہ ہمارے ملک میں ایک طرف غربت ہے تو دوسری طرف کرونا وائرس جس سے عوام کو محفوظ بنانے کے لئے محدود وسائل میں رہتے ہوئے بھرپور اقدامات یقینی بنائے جارہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ احتیاطی تدابیر اختیار کرنا کرونا سے بچاؤ کا سب موثر طریقہ ہے پاکستان کوسٹ گارڈ ز بھی اس ضمن میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کے خلاف یہ ہماری مشترکہ جنگ ہے، اس میں ہر پاکستانی کی کوششوں کی ضرورت ہے بالخصوص مخیر حضرات اور سماجی بھلائی کی تنظیموں کو آگے بڑھ چڑھ کر حصہ لینا ہوگا جو کہ وقت کا اہم ترین تقاضہ بھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کوسٹ گارڈ اسمگلنگ، منشیات کی روک تھام میں نمایاں کردار ادا کررہی ہے سمندری حدود میں غیر قانونی کام،منشیات کی اسمگلنگ اور وطن عزیز کو دشمن کی سرگرمیوں سے محفوظ رکھنے میں کوسٹ گارڈ ز قومی خدمت انجام دینا والا سرفہرست ادارہ ہے اس ادارہ پر پوری قوم کو فخر بھی ہے۔ ملاقات میں بریگیڈیئر ثاقب قمر نے ادارہ کی کارکردگی بتاتے ہوئے کہا کہ سمندری حدود سے غیر قانونی تمام کام ختم کرنے کے لئے شب وروز کام کررہے ہیں جبکہ کورونا پر کنٹرول کے حکومتی اقدامات پر بھرپور عمل کررہے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت ساحل سمندر کے ساتھ کوروناوائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے پاکستان کوسٹ گارڈز کی تقریبا20 چھوٹی بڑی کشتیاں اور600 نفری سر گرم عمل ہے اوراب تک 284کشتیاں میں موجود 4256ماہی گیروں کو سمندر کے اندر کورونا وائرس کے حوالے سے اسکریننگ کی گئی جس کے بعد 04مشتبہ افراد کو گوادر ہسپتال میں علاج کے لیے منتقل کیا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ کورونا وائرس کے پیش نظر غریب 730ماہی گیروں میں فری راشن تقسیم کیا گیا۔بریگیڈیئر ثاقب قمر نے بتایا کہ کوسٹ گارڈز نے چھوٹے ماہی گیروں کو 5چھوٹی کشتیوں کے ذریعہ ناٹیکل مائل کے اندر مچھلی پکڑنے کی اجازت دیدی ہے یہ وہ ماہی گیر ہیں جو روزانہ کی بنیاد پر مچھلیاں پکڑتے اور بیچتے ہیں،مچھلیاں نہ پکڑنے کے باعث یہ چھوٹے ماہی گیر مشکلات کا شکار تھے۔ گورنرسندھ نے پاکستان کوسٹ گارڈز کی جانب سے ساحلی پٹی کے غریب ماہی گیروں میں فری راشن کی فراہمی کو سراہا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -