عید الفطر قریب آتے ہی بازار سج گئے‘خریداری کیلئے لوگوں کا رش نہ ہونے کے برابر

عید الفطر قریب آتے ہی بازار سج گئے‘خریداری کیلئے لوگوں کا رش نہ ہونے کے برابر

لاہور (اسد اقبال) عیدالفطر قریب آتے ہی صوبائی دارالحکومت میں واقع تجارتی مراکز، مارکیٹیں اور بازار سج گئے ہیں۔ دکانداروں نے اپنی دکانیں اور سٹالز کو اشیاءضروریہ سے بھرتے ہوئے برقی قمقموں سے سجاکر تیاریاں مکمل کرلی ہیں۔ تاہم رمضان المبارک کا دوسرا عشرہ اختتام کے قریب پہنچنے کے باوجود بازاروں میںشہریوں کے رش میں اضافہ نہ ہونے کے برابر ریکھا گیا ہے۔ پاکستان رپورٹ کے مطابق عید الفطر کی آمد آمد کے ساتھ ہی پوش علاقوں میں واقع تجارتی مراکز لبرٹی، گلبرگ، پینوراما سنٹر، برکت مارکیٹ، صدیق ٹریڈ سنٹر، اوریگا سنٹر، مال روڈ، شادمان مارکیٹ سمیت دیگر مارکیٹوں میں تجارتی مراکز کو آرائشی لائٹوں سے سجا دیا گیا ہے۔ جبکہ پسماندہ علاقوں میں واقع بازاروںمیں سٹال ہولڈرز نے جیولری، میک اپ سامان، گارمنٹس اور شوز کے سٹالز لگاتے ہوئے سیل لگادی ہے۔ تاہم عیدالفطر میں ڈیڑھ ہفتہ باقی رہ جانے کے باوجود بازاروں اور مارکیٹوں میں شہریوں کے رش میں اضافہ نہ ہوسکا ہے۔ علاوہ ازیں ضلعی حکومت کی جانب سے بھی بازاروں اور مارکیٹوں کے داخلی وخارجی راستوں پر سیکورٹی کے حوالہ سے کوئی پلان ترتیب نہ دیا جاسکا ہے۔ واضح رہے کہ ماضی میں مذہبی تہواروں کے قریب آتے ہی پولیس تاجر لائزن ترتیب دیتے ہوئے بازاروں میں سیکورٹی کے تسلی بخش اقدامات کئے جاتے تھے۔ ”پاکستان“ سے گفتگو کرتے ہوئے شہریوں نے کہا کہ عیدالفطر کی آمد قریب آتے ہی چہرے خوشی سے ٹمٹما اٹھے ہیں۔ تاہم آسماں سے باتیں کرتی مہنگائی نے غریب وسفید پوش طبقہ سے مذہبی تہواروں کی خوشیاں بھی چھین لی ہیں۔ حکومتی بلند وبالا دعوے بھی مہنگائی کو کنٹرول کرنے میں مکمل طور پر ناکام ثابت ہوتے ہیں۔ شہریوں کا کہنا ہے کہ عید خریداری کی غرض سے آتے ہیں۔ تاہم اشیاءکی قیمتیں گزشتہ سال کی نسبت دگنی ہوچکی ہیں۔ جن کو خریدنا محال ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ مہنگائی کے ذمہ دار جہاں حکمران ہیں وہی دکاندار بھی ہیں۔ جو مصنوعی اضافہ کرکے اشیاءکی قیمتیں آسمان پر پہنچا کر ناجائز منافع خوری کرتے ہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1