ام المومنین سیدہ عائشہ صدیقہؓ علم وحکمت کا بحر بیکراں تھیں، نوشابہ ضیاء

ام المومنین سیدہ عائشہ صدیقہؓ علم وحکمت کا بحر بیکراں تھیں، نوشابہ ضیاء

لاہور (پ ر) حضرت سیدہ عائشہ صدیقہؓ نے اپنی پوری زندگی عورتوں اور مردوں میں اسلام اور اسکے احکام وقوانین اور اسکے اخلاق وعادات کی تعلیم دینے میں صرف کرکے دین اسلام کیلئے بیش بہا خدمات انجام دیں۔ سیدہ عائشہ صدیقہؓ نے صرف احادیث ہی روایت نہیں کیں بلکہ فقیہا، مفسر اور مجتہدہ بھی تھیں۔ آپ کو مسلمان عورتوں میں سب سے بڑی فقیہا جانا اور تسلیم کیا جاتا ہے۔ آپؓ کا شمار مدینے کی ان چند علمی شخصیات میں ہوتا تھا۔ جنکے فتوے پر لوگوں کو مکمل اعتماد تھا۔ ان خیالات کا اظہار مرکزی ناظمہ منہاج القرآن ویمن لیگ نوشابہ ضیاءنے منہاج القرآن ویمن لیگ کے زیراہتمام مرکزی سیکرٹریٹ میں یوم سیدہ عائشہ صدیقہؓ کے موقع پر سیرت سیدہ عائشہ صدیقہؓ کے عنوان سے منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے سیدہ عائشہ صدیقہؓ کی حیات طیبہ پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ سیدہ عائشہ صدیقہؓ کا اسوہ¿ قیامت تک خواتین کیلئے مشعل راہ ہے۔ آپ نے کمسنی میں تاجدار کائنات ﷺ کی رفقت حاصل کی اور عین جوانی میں 18 سال کی عمر میں رسول کریم ﷺ کی جدائی کا غم سہنا پڑا مگر سیدہ عائشہ صدیقہؓ نے رشدوہدایت کا وہ فیض کثیر جو رسول کریمﷺ کی سنگت سے آپکو ملا اسے امت تک منتقل کرنے میں بے مثال کردار ادا کیا اور امت نے پردے کے پیچھے سے آدھا دین آپؓ نے حاصل کیا۔ نوشابہ ضیاءنے اپنے خطاب میں کہا کہ آج پھر امت مسلمہ کی خواتین کو ام المومنین سیدہ عائشہ ؓ کی تعلیمات واسوہ کو اپنا کر معاشرے میں بہتری میں اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔

مزید : ایڈیشن 1